Constitution of the Islamic Republic of Pakistan 1973, as amended to 2015


Affirmative Action (Broadly)

The State shall encourage local Government institutions composed of elected representatives of the areas concerned and in such institutions special representation will be given to peasants, workers and women. (Art. 32)

Citizenship and Nationality

4. Nationality, citizenship and naturalisation. (Fourth Schedule, Federal Legislative List, Part I)

Jurisdiction and Access

(1) Subject to this Article, the Supreme Court shall have jurisdiction to hear and determine appeals from judgements, decrees, final orders or sentences of a High Court.
(2) An appeal shall lie to the Supreme Court from any judgement, decree, final order or sentence of a High Court-

(f) if the High Court certifies that the case involves a substantial question of law as to the interpretation of the Constitution.
… (Art. 185)

Education

(1) No person attending any educational institution shall be required to receive religious instruction, or take part in any religious ceremony, or attend religious worship, if such instruction, ceremony or worship relates to a religion other than his own.

(3) Subject to law.

(b) no citizen shall be denied admission to any educational institution receiving aid from public revenues on the ground only of race, religion, caste or place of birth.
(4) Nothing in this Article shall prevent any public authority from making provision for the Advancement of any socially or educationally backward class of citizens. (Art. 22)

Education

The State shall provide free and compulsory education to all children of the age of five to sixteen years in such manner as may be determined by law. (Art. 25A)

Education

The State shall-
(a) promote, with special care, the educational and economic interests of backward classes or areas;
(b) remove illiteracy and provide free and compulsory secondary education within minimum possible period;
(c) make technical and professional education generally available and higher education equally accessible to all on the basis of merit;
… (Art. 37)

Employment Rights and Protection

The State shall ensure the elimination of all forms of exploitation and the gradual fulfilment of the fundamental principle, from each according to his ability, to each according to his work. (Art. 3)

Employment Rights and Protection

Subject to such qualifications, if any, as may be prescribed by law, every citizen shall have the right to enter upon any lawful profession or occupation, and to conduct any lawful trade or business: … (Art. 18)

Employment Rights and Protection

The State shall-

(e) make provision for securing just and humane conditions of work, ensuring that children and women are not employed in vocations unsuited to their age or sex, and for maternity benefits for women in employment;
… (Art. 37)

Employment Rights and Protection

The State shall-
(a) secure the well-being of the people, irrespective of sex, caste, creed or race, by raising their standard of living, by preventing the concentration of wealth and means of production and distribution in the hands of a few to the detriment of general interest and by ensuring equitable adjustment of rights between employers and employees, and landlords and tenants;
(b) provide for all citizens, within the available resources of the country, facilities for work and adequate livelihood with reasonable rest and leisure;
(c) provide for all persons employed in the service of Pakistan or otherwise, social security by compulsory social insurance or other means;
… (Art. 38)

Equality and Non-Discrimination

… Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice, as enunciated by Islam, shall be fully observed; …
Wherein shall be guaranteed fundamental rights, including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; …
Inspired by the resolve to protect our national and political unity and solidarity by creating an egalitarian society through a new order; … (Preamble)

Equality and Non-Discrimination

To enjoy the protection of law and to be treated in accordance with law is the inalienable right of every citizen, wherever he may be and of every other person for the time being within Pakistan. … (Art. 4)

Equality and Non-Discrimination

(1) All citizens are equal before law and are entitled to equal protection of law.
(2) There shall be no discrimination on the basis of sex.
(3) Nothing in this Article shall prevent the State from making any special provision for the protection of women and children. (Art. 25)

Equality and Non-Discrimination

(1) In respect of access to places of public entertainment or resort, not intended for religious purposes only, there shall be no discrimination against any citizen on the ground only of race, religion, caste, sex, residence or place of birth.
(2) Nothing in clause (1) shall prevent the State from making any special provision for women and children. (Art. 26)

Equality and Non-Discrimination

The State shall discourage parochial, racial, tribal sectarian and provincial prejudices among the citizens. (Art. 33)

Equality and Non-Discrimination

In the Constitution,
(a) words importing the masculine gender shall be taken to include females;
… (Art. 263)

Equality and Non-Discrimination

… Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice as enunciated by Islam shall be fully observed; …
Wherein shall be guaranteed fundamental righ ts including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; … (The Objectives Resolution)

Obligations of the State

… Wherein shall be guaranteed fundamental rights, including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; … (Preamble)

Obligations of the State

(1) Any law, or any custom or usage having the force of law, in so far as it is inconsistent with the rights conferred by this Chapter,3shall, to the extent of such inconsistency, be void.
(2) The State4 shall not make any law which takes away or abridges the rights so conferred and any law made in contravention of this clause shall, to the extent of such contravention, be void.
… (Art. 8)

Obligations of the State

… Wherein shall be guaranteed fundamental rights including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; … (Objectives Resolution)

Judicial Protection

(3) Without prejudice to the provisions of Article 199, the Supreme Court shall, if it considers that a question of public importance with reference to the enforcement of any of the Fundamental Rights conferred by Chapter I of Part II is involved, have the power to make an order of the nature mentioned in the said Article. (Art. 184)

Judicial Protection

(1) Subject to the Constitution, a High Court may, if it is satisfied that no other adequate remedy is provided by law,—
(a) on the application of any aggrieved party, make an order-
(i) directing a person performing, within the territorial jurisdiction of the Court, functions in connection with the affairs of the Federation, a Province or a local authority, to refrain from doing anything he is not permitted by law to do, or to do anything he is required by law to do; or
(ii) declaring that any act done or proceeding taken within the territorial jurisdiction of the Court by a person performing functions in connection with the affairs of the Federation, a Province or a local authority has been done or taken without lawful authority and is of no legal effect;

(c) on the application of any aggrieved person, make an order giving such directions to any person or authority, including any Government exercising any power or performing any function in, or in relation to, any territory within the jurisdiction of that Court as may be appropriate for the enforcement of any of the Fundamental Rights conferred by Chapter 1 of Part II.
(2) Subject to the Constitution, the right to move a High Court for the enforcement of any of the Fundamental Rights conferred by Chapter 1 of Part II shall not be abridged.

(5) In this Article, unless the context otherwise requires,
"person" includes any body politic or corporate, any authority of or under the control of the Federal Government or of a Provincial Government, and any Court or tribunal, other than the Supreme Court, a High Court or a Court or tribunal established under a law relating to the Armed Forces of Pakistan;
… (Art. 199)

Indigenous Peoples

(1) Subject to the Constitution, the executive authority of the Federation shall extend to the Federally Administered Tribal Areas, and the executive authority of a Province shall extend to the Provincially Administered Tribal Areas therein.
(2) The President may, from time to time, give such directions to the Governor of a Province relating to the whole or any part of a Tribal Area within the Province as he may deem necessary, and the Governor shall, in the exercise of his functions under this Article, comply with such directions.
(3) No act of Majlis-e-Shoora (Parliament) shall apply to any Federally Administered Tribal Area or to any part thereof, unless the President so directs, and no Act of Majlis-e-Shoora (Parliament) or a Provincial Assembly shall apply to a Provincially Administered Tribal Area, or to any part thereof, unless the Governor of the Province in which the Tribal Area is situate, with the approval of the President, so directs; and in giving such a direction with respect to any law, the President or, as the case may be, the Governor, may direct that the law shall, in its application to a Tribal Area, or to a specified part thereof, have effect subject to such exceptions and modifications as may be specified in the direction.
(4) Notwithstanding anything contained in the Constitution, the President may, with respect to any matter within the Legislative competence of Majlis-e-Shoora (Parliament), and the Governor of a Province, with the prior approval of the President, may, with respect to any matter within the Legislative competence of the Provincial Assembly make regulations for the peace and good government of a Provincial Administered Tribal Area or any part thereof, situated in the province.
(5) Notwithstanding anything contained in the Constitution, the President may, with respect to any matter, make regulations for the peace and good government of a Federally Administered Tribal Area or any part thereof.
(6) The President may, at any time, by Order, direct that the whole or any part of a Tribal Area shall cease to be Tribal Area, and such order may contain such incidental and consequential provisions as appear to the President to be necessary and proper:
Provided that before making any Order under this clause, the President shall ascertain, in such manner as he considers appropriate, the views of the people of the Tribal Area concerned, as represented in tribal jirga.
(7) Neither the Supreme Court nor a High Court shall exercise any jurisdiction under the Constitution in relation to a Tribal Area, unless Majlis-e-Shoora (Parliament) by law otherwise provides:
Provided that nothing in this clause shall affect the jurisdiction which the Supreme Court or a High Court exercised in relation to a Tribal Area immediately before the commencing day. (Art. 247)

Limitations and/or Derogations

(2) The State shall not make any law which takes away or abridges the rights so conferred and any law made in contravention of this clause shall, to the extent of such contravention, be void.

(5) The rights conferred by this Chapter5 shall not be suspended except as expressly provided by the Constitution. (Art. 8)

Limitations and/or Derogations

(1) Nothing contained in Articles 15, 16, 17, 18, 19, and 24 shall, while a proclamation of Emergency is in force, restrict the power of the State as defined in Article 7 to make any law or take any executive action which it would, but for the provisions in the said Articles, be competent to make or to take, but any law so made shall, to the extent of the incompetency, cease to have effect, and shall be deemed to have been repealed, at the time when the Proclamation is revoked or has ceased to be in force.
(2) While a Proclamation of Emergency is in force, the President may, by Order, declare that the right to move any Court for the enforcement of such of the Fundamental Rights conferred by Chapter I of Part II as may be specified in the Order, and any proceeding in any Court which is for the enforcement, or involves the determination of any question as to the infringement, of any of the Rights so specified, shall remain suspended for the period during which the Proclamation is in force, and any such Order may be made in respect of the whole or any part of Pakistan.
… (Art. 233)

Marriage and Family Life

The state shall protect the marriage, the family, the mother and the child. (Art. 35)

Marriage and Family Life

The State shall-

(e) make provision for securing just and humane conditions of work, ensuring that children and women are not employed in vocations unsuited to their age or sex, and for maternity benefits for women in employment;
… (Art. 37)

Minorities

… Wherein the Muslims shall be enabled to order their lives in the individual and collective spheres in accordance with the teachings and requirements of Islam as set out in the Holy Quran and Sunnah;
Wherein adequate provision shall be made for the minorities freely to profess and practise their religions and develop their cultures; …
Wherein shall be guaranteed fundamental rights, including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality;
Wherein adequate provision shall be made to safeguard the legitimate interests of minorities and backward and depressed classes; … (Preamble)

Minorities

The State shall safeguard the legitimate rights and interests of minorities, including their due representation in the Federal and Provincial services. (Art. 36)

Minorities

… Wherein adequate provision shall be made for the minorities to freely profess and practise their religions and develop their cultures; …
Wherein adequate provision shall be made to safeguard the legitimate interests of minorities and backward and depressed classes; … (Objectives Resolution)

Participation in Public Life and Institutions

(1) No citizen otherwise qualified for appointment in the service of Pakistan shall be discriminated against in respect of any such appointment on the ground only of race, religion, caste, sex, residence or place of birth:
Provided that, for a period not exceeding forty years from the commencing day, posts may be reserved for persons belonging to any class or area to secure their adequate representation in the service of Pakistan:
Provided further that, in the interest of the said service, specified posts or services may be reserved for members of either sex if such posts or services entail the performance of duties and functions which cannot be adequately performed by members of the other sex:
Provided also that under-representation of any class or area in the service of Pakistan may be redressed in such manner as may be determined by an Act of Majlis-e-Shoora (Parliament).
… (Art. 27)

Participation in Public Life and Institutions

Steps shall be taken to ensure full participation of women in all spheres of national life. (Art. 34)

Participation in Public Life and Institutions

The State shall-

(f) enable the people of different areas, through education, training, agricultural and industrial development and other methods, to participate fully in all forms of national activities, including employment in the service of Pakistan;
… (Art. 37)

Political Rights and Association

(1) Every citizen shall have the right to form associations or unions, subject to any reasonable restrictions imposed by law in the interest of sovereignty or integrity of Pakistan, public order or morality.
(2) Every citizen, not being in the service of Pakistan, shall have the right to form or be a member of a political party, subject to any reasonable restrictions imposed by law in the interest of the sovereignty or integrity of Pakistan and such law shall provide that where the Federal Government declares that any political party has been formed or is operating in a manner prejudicial to the sovereignty or integrity of Pakistan, the Federal Government shall, within fifteen days of such declaration, refer the matter to the Supreme Court whose decision on such reference shall be final.
… (Art. 17)

Political Rights and Association

(2) A person shall be entitled to vote if­—
(a) he is a citizen of Pakistan;
(b) he is not less than eighteen years of age;
(c) his name appears on the electoral roll; and
(d) he is not declared by a competent court to be of unsound mind.
… (Art. 51)

National level

(1) There shall be three hundred and forty-two seats for members in the National Assembly, including seats reserved for women and non-Muslims.6

(4) In addition to the number of seats referred to in clause (3), there shall be, in the National Assembly, ten seats reserved for non-Muslims.
(5) The seats in the National Assembly shall be allocated to each Province, the Federally Administered Tribal Areas and the Federal Capital on the basis of population in accordance with the last preceding census officially published.
(6) For the purpose of election to the National Assembly,—­
(a) the constituencies for the general seats shall be single member territorial constituencies and the members to fill such seats shall be elected by direct and free vote in accordance with law;
(b) each Province shall be a single constituency for all seats reserved for women which are allocated to the respective Provinces under clause (3);
(c) the constituency for all seats reserved for non-Muslims shall be the whole country;
(d) members to the seats reserved for women which are allocated to a Province under clause (3) shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats secured by each political party from the Province concerned in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates; and
(e) members to the seats reserved for non-Muslims shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats won by each political party in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates. (Art. 51)

National level

(1) The Senate shall consist of one-hundred and four members, of whom,
(a) fourteen shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(b) eight shall be elected from the Federally Administered Tribal Areas, in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(c) two on general seats, and one woman and one technocrat including aalim shall be elected from the Federal Capital in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(d) four women shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(e) four technocrats including ulema shall be elected by the members of each Provincial Assembly; and
(f) four non-Muslims, one from each Province, shall be elected by the members of each Provincial Assembly:
Provided that paragraph (f) shall be effective from the next Senate election after the commencement of the Constitution (Eighteenth Amendment) Act, 2010.
(2) Election to fill seats in the Senate allocated to each Province shall be held in accordance with the system of proportional representation by means of the single transferable vote.
(3) The Senate shall not be subject to dissolution but the term of its members, who shall retire as follows, shall be six years :­
(a) of the members referred to in paragraph (a) of clause (1), seven shall retire after the expiration of the first three years and seven shall retire after the expiration of the next three years;
(b) of the members referred to in paragraph (b) of the aforesaid clause, four shall retire after the expiration of the first three years and four shall retire after the expiration of the next three years;
(c) of the members referred to in paragraph (c) of the aforesaid clause,­—
(i) one elected on general seat shall retire after the expiration of the first three years and the other one shall retire after the expiration of the next three years; and
(ii) one elected on the seat reserved for technocrat shall retire after first three years and the one elected on the seat reserved for women shall retire after the expiration of the next three years;
(d) of the members referred to in paragraph (d) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the first three years and two shall retire after the expiration of the next three years;
(e) of the members referred to in paragraph (e) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the. first three years and two shall retire after the expiration of the next three years; and
(f) of the members referred to in paragraph (f) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of first three years and two shall retire after the expiration of next three years:
Provided that the Election Commission for the first term of seats for non-Muslims shall draw a lot as to which two members shall retire after the first three years. … (Art. 59)

National level

(6) When a seat reserved for women or non-Muslims in the National Assembly or a Provincial Assembly falls vacant, on account of death, resignation or disqualification of a member, it shall be filled by the next person in order of precedence from the party list of the candidates to be submitted to the Election Commission by the political party whose member has vacated such seat.
Provided that if at any time the party list is exhausted, the concerned political party may submit a name for any vacancy which may occur thereafter. (Art. 224)

Subnational levels

(l) Each Provincial Assembly shall consist of general seats and seats reserved for women and non-Muslims as specified herein7  ...   
(3) For the purpose of election to a Provincial Assembly,­—
(a) the constituencies for the general seats shall be single member territorial constituencies and the members to fill such seats shall be elected by direct and free vote;
(b) each Province shall be a single constituency for all seats reserved for women and non-­Muslims allocated to the respective Provinces under clause (1);
(c) the members to fill seats reserved for women and non-Muslims allocated to a Province under clause (1) shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of the total number of general seats secured by each political party in the Provincial Assembly:
Provided that for the purpose of this sub-clause, the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates. (Art. 106)

Subnational levels

(6) When a seat reserved for women or non-Muslims in the National Assembly or a Provincial Assembly falls vacant, on account of death, resignation or disqualification of a member, it shall be filled by the next person in order of precedence from the party list of the candidates to be submitted to the Election Commission by the political party whose member has vacated such seat.
Provided that if at any time the party list is exhausted, the concerned political party may submit a name for any vacancy which may occur thereafter. (Art. 224)

Political Parties

(2) Every citizen, not being in the service of Pakistan, shall have the right to form or be a member of a political party, subject to any reasonable restrictions imposed by law in the interest of the sovereignty or integrity of Pakistan and such law shall provide that where the Federal Government declares that any political party has been formed or is operating in a manner prejudicial to the sovereignty or integrity of Pakistan, the Federal Government shall, within fifteen days of such declaration, refer the matter to the Supreme Court whose decision on such reference shall be final.
(3) Every political party shall account for the source of its funds in accordance with law. (Art. 17)

Electoral Bodies

(1) For the purpose of election to both Houses of Majlis-e-Shoora (Parliament), Provincial Assemblies and for election to such other public offices as may be specified by law, a permanent Election Commission shall be constituted in accordance with this Article.
(2) The Election Commission shall consist of,—
(a) the Commissioner who shall be the Chairman of the Commission; and
(b) four members, each of whom has been a Judge of a High Court from each Province, appointed by the President in the manner provided for appointment of the Commissioner in clauses (2A) and (2B) of Article 213.
(3) It shall be the duty of the Election Commission to organize and conduct the election and to make such arrangements as are necessary to ensure that the election is conducted honestly, justly, fairly and in accordance with law, and that corrupt practices are guarded against. (Art. 218)

Head of State

(1) There shall be a President of Pakistan who shall be the Head of State and shall represent the unity of the Republic.
(2) A person shall not be qualified for election as President unless he is a Muslim of not less than forty-five years of age and is qualified to be elected as member of the National Assembly.
(3) The President shall be elected in accordance with the provisions of the Second Schedule by the members of an electoral college consisting of—
(a) the members of both Houses; and
(b) the members of the Provincial Assemblies.
… (Art. 41)

Government

(1) Subject to the Constitution, the executive authority of the Federation shall be exercised in the name of the President by the Federal Government, consisting of the Prime Minister and the Federal Ministers, which shall act through the Prime Minister, who shall be the chief executive of the Federation.
… (Art. 90)

Government

(1) There shall be a Cabinet of Ministers, with the Prime Minister at its head, to aid and advise the President in the exercise of his functions.

(4) The Prime Minister shall be elected by the votes of the majority of the total membership of the National Assembly: … (Art. 91)

Government

(1) Subject to clauses (9) and (10) of Article 91, the President shall appoint Federal Ministers and Ministers of State from amongst the members of Majlis-e-Shoora (Parliament) on the advice of the Prime Minister: … (Art. 92)

Legislature

There shall be a Majlis-e-Shoora (Parliament) of Pakistan consisting of the President and two Houses to be known respectively as the National Assembly and the Senate. (Art. 50)

Legislature

(1) There shall be three hundred and forty-two seats for members in the National Assembly, including seats reserved for women and non-Muslims.8

(4) In addition to the number of seats referred to in clause (3), there shall be, in the National Assembly, ten seats reserved for non-Muslims.
(5) The seats in the National Assembly shall be allocated to each Province, the Federally Administered Tribal Areas and the Federal Capital on the basis of population in accordance with the last preceding census officially published.
(6) For the purpose of election to the National Assembly,—­
(a) the constituencies for the general seats shall be single member territorial constituencies and the members to fill such seats shall be elected by direct and free vote in accordance with law;
(b) each Province shall be a single constituency for all seats reserved for women which are allocated to the respective Provinces under clause (3);
(c) the constituency for all seats reserved for non-Muslims shall be the whole country;
(d) members to the seats reserved for women which are allocated to a Province under clause (3) shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats secured by each political party from the Province concerned in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates; and
(e) members to the seats reserved for non-Muslims shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats won by each political party in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates. (Art. 51)

Legislature

(1) The Senate shall consist of one-hundred and four members, of whom,
(a) fourteen shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(b) eight shall be elected from the Federally Administered Tribal Areas, in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(c) two on general seats, and one woman and one technocrat including aalim shall be elected from the Federal Capital in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(d) four women shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(e) four technocrats including ulema shall be elected by the members of each Provincial Assembly; and
(f) four non-Muslims, one from each Province, shall be elected by the members of each Provincial Assembly:
Provided that paragraph (f) shall be effective from the next Senate election after the commencement of the Constitution (Eighteenth Amendment) Act, 2010.
(2) Election to fill seats in the Senate allocated to each Province shall be held in accordance with the system of proportional representation by means of the single transferable vote.
(3) The Senate shall not be subject to dissolution but the term of its members, who shall retire as follows, shall be six years :­
(a) of the members referred to in paragraph (a) of clause (1), seven shall retire after the expiration of the first three years and seven shall retire after the expiration of the next three years;
(b) of the members referred to in paragraph (b) of the aforesaid clause, four shall retire after the expiration of the first three years and four shall retire after the expiration of the next three years;
(c) of the members referred to in paragraph (c) of the aforesaid clause,­—
(i) one elected on general seat shall retire after the expiration of the first three years and the other one shall retire after the expiration of the next three years; and
(ii) one elected on the seat reserved for technocrat shall retire after first three years and the one elected on the seat reserved for women shall retire after the expiration of the next three years;
(d) of the members referred to in paragraph (d) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the first three years and two shall retire after the expiration of the next three years;
(e) of the members referred to in paragraph (e) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the first three years and two shall retire after the expiration of the next three years; and
(f) of the members referred to in paragraph (f) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of first three years and two shall retire after the expiration of next three years:
Provided that the Election Commission for the first term of seats for non-Muslims shall draw a lot as to which two members shall retire after the first three years.
… (Art. 59)

Legislature

(1) A person shall not be qualified to be elected or chosen as a member of Majlis-e-Shoora (Parliament) unless­—
(a) he is a citizen of Pakistan;
(b) he is, in the case of the National Assembly, not less than twenty- five years of age and is enrolled as a voter in any -electoral roll in­—
(i) any part of Pakistan, for election to a general seat or a seat reserved for a non-Muslims; and
(ii) any area in a Province from which she seeks membership for election to a seat reserved for women.
(c) he is, in the case of the Senate, not less than thirty years of age and is enrolled as a voter in any area in a Province or, as the case may be, the Federal Capital or the Federally Administered Tribal Areas, from where he seeks membership;
(d) he is of good character and is not commonly known as one who violates Islamic Injunctions;
(e) he has adequate knowledge of Islamic teachings and practices obligatory duties prescribed by Islam as well as well abstains from major sins;
(f) he is sagacious, righteous, non-profligate, honest and ameen, there being no declaration to the contrary by a court of law; and
(g) he has not, after the establishment of Pakistan, worked against the integrity of the country or opposed the ideology of Pakistan:
(2) The disqualifications specified in paragraphs (d) and (e) shall not apply to a person who is a non-Muslim, but such a person shall have good moral reputation. (Art. 62)

Property, Inheritance and Land Tenure

Every citizen shall have the right to acquire, hold and dispose of property9 in any part of Pakistan, subject to the Constitution and any reasonable restrictions imposed by law in the public interest. (Art. 23)

Property, Inheritance and Land Tenure

(1) Majlis-e-Shoora (Parliament) may by law,-
(a) prescribe the maximum limits as to property or any class thereof which may be owned, held, possessed or controlled by any person; …
(2) Any law which permits a person to own beneficially or possess beneficially an area of land greater than that which, immediately before the commencing day, he could have lawfully owned beneficially or possessed beneficially shall be invalid. (Art. 253)

Protection from Violence

The State shall ensure the elimination of all forms of exploitation and the gradual fulfilment of the fundamental principle, from each according to his ability, to each according to his work. (Art. 3)

Protection from Violence

To enjoy the protection of law and to be treated in accordance with law is the inalienable right of every citizen, wherever he may be and of every other person for the time being within Pakistan.
(2) In particular-
(a) no action detrimental to the life, liberty, body, reputation or property of any person shall be taken except in accordance with law;
… (Art. 4)

Protection from Violence

(1) Slavery is non-existent and forbidden and no law shall permit or facilitate its introduction into Pakistan in any form.
(2) All forms of forced labour and traffic in human beings are prohibited.
… (Art. 11)

Protection from Violence

(2) No person shall be subjected to torture for the purpose of extracting evidence. (Art 14)

Public Institutions and Services

The state shall protect the marriage, the family, the mother and the child. (Art. 35)

Public Institutions and Services

The State shall-
(a) secure the well-being of the people, irrespective of sex, caste, creed or race, by raising their standard of living, by preventing the concentration of wealth and means of production and distribution in the hands of a few to the detriment of general interest and by ensuring equitable adjustment of rights between employers and employees, and landlords and tenants;
(b) provide for all citizens, within the available resources of the country, facilities for work and adequate livelihood with reasonable rest and leisure;
(c) provide for all persons employed in the service of Pakistan or otherwise, social security by compulsory social insurance or other means;
(d) provide basic necessities of life, such as food, clothing, housing, education and medical relief, for all such citizens, irrespective of sex, caste, creed or race, as are permanently or temporarily unable to earn their livelihood on account of infirmity, sickness or unemployment;
(e) reduce disparity in the income and earnings of individuals, including persons in the various classes of the service of Pakistan;
… (Art. 38)

Status of the Constitution

(2) Obedience to the Constitution and law is the inviolable obligation of every citizen wherever he may be and of every other person for the time being within Pakistan. (Art. 5)

Status of the Constitution

(1) Any law, or any custom or usage having the force of law, in so far as it is inconsistent with the rights conferred by this Chapter10 shall, to the extent of such inconsistency, be void.
(2) The State shall not make any law which takes away or abridges the rights so conferred and any law made in contravention of this clause shall, to the extent of such contravention, be void.
… (Art. 8)

Status of the Constitution

The provisions of this Chapter11 shall have effect notwithstanding anything contained in the Constitution. (Art. 203A)

Religious Law

Whereas sovereignty over the entire Universe belongs to Almighty Allah alone, and the authority to be exercised by the people of Pakistan within the limits prescribed by Him is a sacred trust; …
Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice, as enunciated by Islam, shall be fully observed;
Wherein the Muslims12 shall be enabled to order their lives in the individual and collective spheres in accordance with the teachings and requirements of Islam as set out in the Holy Quran and Sunnah;
… (Preamble)

Religious Law

Islam shall be the State religion of Pakistan. (Art. 2)

Religious Law

(1) Steps shall be taken to enable the Muslims of Pakistan, individually and collectively, to order their lives in accordance with the fundamental principles and basic concepts of Islam and to provide facilities whereby they may be enabled to understand the meaning of life according to the Holy Quran and Sunnah.
(2) The State shall endeavour, as respects the Muslims of Pakistan,-
(a) to make the teaching of the Holy Quran and Islamiat compulsory, to encourage and facilitate the learning of Arabic language and to secure correct and exact printing and publishing of the Holy Quran;
(b) to promote unity and the observance of the Islamic moral standards; and
(c) to secure the proper organisation of Zakat, ushr, auqaf and mosques. (Art. 31)

Religious Law

The provisions of this Chapter13 shall have effect notwithstanding anything contained in the Constitution. (Art. 203A)

Religious Law

In this Chapter14 unless there is anything repugnant in the subject or context,-

(c) "law" includes any custom or usage having the force of law but does not include the Constitution, Muslim personal law, any law relating to the procedure of any court or tribunal or, until the expiration of ten years from the commencement of this Chapter, any fiscal law or any law relating to the levy and collection of taxes and fees or banking or insurance practice and procedure;
… (Art. 203B)

Religious Law

(1) The Court may, either of its own motion or on the petition of a citizen of Pakistan or the Federal Government or a Provincial Government, examine and decide the question whether or not any law or provision of law is repugnant to the Injunctions of Islam, as laid down in the Holy Quran and Sunnah of the Holy Prophet, hereinafter referred to as the Injunctions of Islam.
… (Art. 203D)15

Religious Law

(1) All existing laws shall be brought in conformity with the Injunctions of Islam as laid down in the Holy Quran and Sunnah, in this Part referred to as the Injunctions of Islam, and no law shall be enacted which is repugnant to such injunctions.
Explanation.-In the application of this clause to the personal law of any Muslim sect, the expression “Quran and Sunnah” shall mean the Quran and Sunnah as interpreted by that sect.
(2) Effect shall be given to the provisions of clause (1) only in the manner provided in this Part.
(3) Nothing in this Part shall affect the personal laws of non-Muslim citizens or their status as citizens. (Art. 227)

Religious Law

(1) There shall be, constituted with a period of ninety days from the commencing day a Council of Islamic ideology, in this part referred to as the Islamic Council.
(2) The Islamic Council shall consist of such members, being not less than eight and not more than twenty as the President may appoint from amongst persons having knowledge of the principles and philosophy of Islam as enunciated in the Holy Quran and Sunnah, or understanding of the economic, political, legal or administrative problems of Pakistan.
(3) While appointing members of the Islamic Council the President shall ensure that –
(a) so far as practicable various schools of thought are represented in the Council;
(b) not less than two of the members are persons each of whom is, or has been a Judge of the Supreme Court or of a High Court;
(c) not less than one-third of the members are persons each of whom has been engaged, for a period of not less than fifteen years, in Islamic research or instruction; and
(d) at least one member is a woman.
… (Art. 228)

Religious Law

(1) The functions of the Islamic Council shall be-
(a) to make recommendations to Majlis-e-Shoora (Parliament) and the Provincial Assemblies as the ways and means of enabling and encouraging the Muslims of Pakistan to order their lives individually and collectively in all respects in accordance with the principles and concepts of Islam as enunciated in the Holy Quran and Sunnah;
(b) to advise a House, a Provincial Assembly, the President or a Governor on any question referred to the Council as to whether a proposed law is or is not repugnant to the Injunctions of Islam.
(c) to make recommendations as to the measures for bringing existing laws into conformity with the Injunctions of Islam and the stages by which such measures should be brought into effect; and
(d) to compile in a suitable form, for the guidance of Majlis-e-Shoora (Parliament) and the Provincial Assemblies, such injunctions of Islam as can be given legislative effect.
… (Art. 230)

Religious Law

… Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice as enunciated by Islam shall be fully observed;
Wherein the Muslims shall be enabled to order their lives in the individual and collective spheres in accordance with the teachings and requirements of Islam as set-out in the Holy Quran and the Sunnah; … (Objectives Resolution)

Customary Law

(1) Any law, or any custom or usage having the force of law, in so far as it is inconsistent with the rights conferred by this Chapter,16shall, to the extent of such inconsistency, be void.
… (Art. 8)

Customary Law

In this Chapter17 unless there is anything repugnant in the subject or context,- …
(c) "law" includes any custom or usage having the force of law but does not include the Constitution, Muslim personal law, any law relating to the procedure of any court or tribunal or, until the expiration of ten years from the commencement of this Chapter, any fiscal law or any law relating to the levy and collection of taxes and fees or banking or insurance practice and procedure;
… (Art. 203B)

Affirmative Action (Broadly)

مملکت متعلقہ علاقوں کے منتخب نمائندوں پر مشتمل بلدیاتی اداروں کی حوصلہ افزائی کرے گی اور ایسے اداروں میں کسانوں، مزدوروں اور عورتوں کو خصوصی نمائندگی دی جائے گی۔ (آرٹیکل 32)

Citizenship and Nationality

(4)  قومیت، شہریت، وطن گزینی۔ (جدول چہارم، وفاقی قانون کی فہرست، حصہ اول)

Jurisdiction and Access

(1) اس آرٹیکل کے تابع، عدالت عظمٰی کو کسی عدالت عالیہ کے صادر کردہ فیصلوں، ڈگریوں، حتمی احکام یا سزاؤں کے خلاف اپیلوں کی سماعت کرنے اور ان پر فیصلہ صادر کرنے کا اختیار ہو گا۔
(2) کسی عدالت عالیہ کے صادر کردہ کسی فیصلے، ڈگری، حتمی حکم یا سزا کے خلاف اپیل عدالت عظمٰی میں دائر کی جا سکے گی۔
...
(و) اگر عدالت عالیہ اس امر کی تصدیق کر دے کہ مقدمے میں دستور کی تعبیر کے بارے میں کوئی اہم قانونی مسئلہ درپیش ہے۔
... (آرٹیکل 185)

Education

(1) کسی تعلیمی ادارے میں تعلیم پانے والے کسی شخص کو مذہبی تعلیم حاصل کرنے یا کسی مذہبی تقریب میں حصہ لینے یا مذہبی عبادت میں شرکت کرنے پر مجبور نہیں کیا جائے گا، اگر ایسی تعلیم، تقریب یا عبادت کا تعلق اس کے اپنے مذہب کے علاوہ کسی اور مذہب سے ہو۔

(3) قانون کے تابع -
...
(ب) کسی شہری کو محض نسل، مذہب، ذات یا مقام پیدائش کی بنا پر کسی ایسے تعلیمی ادارے میں داخل ہونے سے محروم نہیں کیا جائے گا جسے سرکاری محاصل سے امداد ملتی ہو۔
(4) اس آرٹیکل میں مذکور کوئی امر معاشرتی یا تعلیمی اعتبار سے پسماندہ شہریوں کی ترقی کے لئے کسی سرکاری ہیئت مجاز کی طرف سے اہتمام کرنے میں مانع نہ ہو گا۔ (آرٹیکل 22)

Education

ریاست پانچ سے سولہ سال تک کی عمر کے تمام بچوں کے لیے مذکورہ طریقہ کار پر جیسا کہ قانون کے ذریعے مقرر کیا جائے مفت اور لازمی تعلیم فراہم کرے گی۔ (آرٹیکل 25 الف)

Education

مملکت:
(الف) پسماندہ طبقات یا علاقوں کے تعلیمی اور معاشی مفادات کو خصوصی توجہ کے ساتھ فروغ دے گی؛
(ب) کم سے کم ممکنہ مدت کے اندر ناخواندگی کا خاتمہ کرے گی اور مفت اور لازمی ثانوی تعلیم مہیا کرے گی؛
(ج) فنی اور پیشہ وارانہ تعلیم کو عام طور پر ممکن الحصول اور اعلی تعلیم کو لیاقت کی بنیاد پر سب کے لیے مساوی طور پر قابلِ دسترس بنائے گی؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 37)

Employment Rights and Protection

مملکت استحصال کی تمام اقسام کے خاتمہ اور اس بنیادی اصول کی تدریجی تکمیل کو یقینی بنائے گی کہ ہر کسی سے اس کی اہلیت کے مطابق کام لیا جائے گا اور ہر کسی کو اس کے کام کے مطابق معاوضہ دیا جائے۔ (آرٹیکل 3)

Employment Rights and Protection

ایسی شرائط قابلیت کے تابع، اگر کوئی ہوں، جو قانون کے ذریعے مقرر کی جائیں، ہر شہری کو کوئی جائز پیشہ یا مشغلہ اختیار کرنے اور کوئی تجارت یا کاروبار کرنے کا حق ہو گا: ... (آرٹیکل 18)

Employment Rights and Protection

مملکت:
...
(ہ) منصفانہ اور نرم شرائط کار، اس امر کی ضمانت دیتے ہوئے کہ بچوں اور عورتوں سے ایسے پیشوں میں کام نہ لیا جائے گا جو ان کی عمر یا جنس کے لئے نامناسب ہوں، مقرر کرنے کے لئے، اور ملازم عورتوں کے لئے زچگی سے متعلق مراعات دینے کے لئے، احکام وضع کرے گی؛
... (آرٹیکل 37)

Employment Rights and Protection

مملکت -
(الف) عام آدمی کے معیار زندگی کو بلند کر کے، دولت اور وسائل پیداوار و تقسیم کو چند اشخاص کے ہاتھوں میں اس طرح جمع ہونے سے روک کر کہ اس سے مفاد عامہ کو نقصان پہنچے اور آجر و ماجور اور زمیندار اور مزارع کے درمیان حقوق کی منصفانہ تقسیم کی ضمانت دے کر بلالحاظ جنس، ذات، مذہب یا نسل، عوام کی فلاح و بہبود کے حصول کی کوشش کرے گی؛
(ب) تمام شہریوں کے لئے، ملک میں دستیاب وسائل کے اندر، معقول آرام و فرصت کے ساتھ کام اور مناسب روزی کی سہولتیں مہیا کرے گی؛
(ج) پاکستان کی ملازمت میں، یا بصورت دیگر ملازم تمام اشخاص کو لازمی معاشرتی بیمہ کے ذریعے یا کسی اور طرح معاشرتی تحفظ مہیا کرے گی؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 38)

Equality and Non-Discrimination

۔ ۔ ۔ جس میں جمہوریت ، آزادی ، مساوات ، رواداری اور عدل عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے ، پوری طرح عمل کیا جائے گا ؛ ۔ ۔ ۔
جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات ، قانون کی نظر میں برابری ، معاشرتی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہوگی؛ ۔ ۔ ۔
اس عزم بالجزم کے ساتھ کہ ایک نئے نظام کے ذریعے مساوات پر مبنی معاشرہ تخلیق کر کے اپنی قومی اور سیاسی وحدت اور یک جہتی کا تحفظ کریں؛ ۔ ۔ ۔ (تمہید)

Equality and Non-Discrimination

ہر شہری کا خواہ کہیں بھی ہو، اور کسی دوسرے شخص کا جو فی الوقت پاکستان میں ہو، یہ ناقابل انتقال حق ہے کہ اسے قانون کا تحفظ حاصل ہو اور اس کے ساتھ قانون کے مطابق سلوک کیا جائے. ... (آرٹیکل 4)

Equality and Non-Discrimination

(1) تمام شہری قانون کی نظر میں برابر ہیں اور قانونی تحفظ کے مساوی طور پر حقدار ہیں۔
(2) محض جنس کی بنا پر کوئی امتیاز نہیں کیا جائے گا۔
(3) اس آرٹیکل میں مذکور کوئی امر عورتوں اور بچوں کے تحفظ کے لئے مملکت کی طرف سے کوئی خاص اہتمام کرنے میں مانع نہ ہو گا۔ (آرٹیکل 25)

Equality and Non-Discrimination

(1) عام تفریح گاہوں یا جمع ہونے کی جگہوں میں جو صرف مذہبی اغراض کے لئے مختص نہ ہوں، آنے جانے کے لئے کسی شہری کے ساتھ محض نسل، مذہب، ذات، جنس، سکونت یا مقام پیدائش کی بناء پر کوئی امتیاز روا نہیں رکھا جائے گا۔
(2) شق نمبر (1) میں مذکورہ کوئی امر عورتوں اور بچوں کے لئے کوئی خاص اہتمام کرنے میں مملکت کے مانع نہیں ہو گا۔ (آرٹیکل 26)

Equality and Non-Discrimination

مملکت شہریوں کے درمیان علاقائی، نسلی، قبائلی، فرقہ وارانہ اور صوبائی تعصّبات کی حوصلہ شکنی کرے گی۔ (آرٹیکل 33)

Equality and Non-Discrimination

اس دستور میں،
(الف) وہ الفاظ جن سے صیغہ مذکر کا مفہوم نکلتا ہو، صیغہ مونث پر بھی حاوی سمجھے جائیں گے؛
... (آرٹیکل 263)

Equality and Non-Discrimination

... جس میں جمہوریت، آزادی، مساوات، رواداری اور عدل... عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے، پوری طرح عمل کیا جائے گا؛
...
جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات، قانون کی نظر میں برابری، معاشرتی، معاشی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہو گی؛ ... (قرارداد مقاصد)

Obligations of the State

۔ ۔ ۔ جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات ، قانون کی نظر میں برابری ، معاشرتی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہوگی؛ ۔ ۔ ۔ (تمہید)

Obligations of the State

(1) کوئی قانون، یا رسم یا رواج جو قانون کا حکم رکھتا ہو، تناقض کی اس حد تک کالعدم ہو گا جس حد تک وہ اس باب میں عطاکردہ حقوق کا نقیض ہو۔
(2) مملکت کوئی ایسا قانون وضع نہیں کرے گی جو بایں طور عطاکردہ حقوق کو سلب یا کم کرے اور ہر وہ قانون جو اس شق کی خلاف ورزی میں وضع کیا جائے اس خلاف ورزی کی حد تک کالعدم ہو گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 8)

Obligations of the State

جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان… حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات، قانون کی نظر میں برابری، معاشرتی، معاشی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہو گی؛ ۔۔۔ (قرارداد مقاصد)

Judicial Protection

(3) آرٹیکل199 کے احکام پر اثرانداز ہوئے بغیر، عدالت عظمی کو، اگر وہ یہ سمجھے کہ حصہ دوم کے باب 1 کے ذریعے تفویض شدہ بنیادی حقوق میں سے کسی حق کے نفاذ کے سلسلے میں عوامی اہمیت کا کوئی سوال درپیش ہے، مذکورہ آرٹیکل میں بیان کردہ نوعیت کا کوئی حکم صادر کرنے کا اختیار ہو گا۔ (آرٹیکل 184)

Judicial Protection

(1) اگر کسی عدالت عالیہ کو اطمینان ہو کہ قانون میں کسی اور مناسب چارہ جوئی کا انتظام نہیں ہے تو وہ، دستور کے تابع، -
(الف) کسی فریق دادخواہ کی درخواست پر، بذریعہ حکم، -
(اول) اس عدالت کے علاقائی اختیار سماعت میں وفاق، کسی صوبے یا کسی مقامی ہیئت مجاز کے امور کے سلسلے میں فرائض انجام دینے والے کسی شخص کو ہدایت دے سکے گی کہ وہ کوئی ایسا کام کرنے سے اجتناب کرے، جس کے کرنے کی اجازت اسے قانون نہیں دیتا، یا وہ کوئی ایسا کام کرے جو قانون کی رو سے اس پرواجب ہے؛ یا (دوم) یہ اعلان کر سکے گی کہ عدالت کے علاقائی اختیار سماعت میں وفاق، کسی صوبے یا کسی مقامی ہیئت مجاز کے امور کے سلسلہ میں فرائض انجام دینے والے کسی شخص کی طرف سے کیا ہوا کوئی فعل یا کی ہوئی کوئی کاروائی قانونی اختیار کے بغیر کی گئی ہے اور کوئی قانونی اثر نہیں رکھتی ہے؛ 
...
(ج) کسی فریق دادخواہ کی درخواست پر، اس عدالت کے اختیار سماعت کے اندر کسی علاقے میں، یا اس علاقے کے بارے میں، کسی اختیار کو استعمال کرنیوالے کسی شخص یا ہیئت مجاز، بشمول کسی حکومت کو ایسی ہدایات دیتے ہوئے حکم صادر کر سکے گی جو حصہ دوم کے باب 1 میں تفویض کردہ بنیادی حقوق میں سے کسی حق کے نفاذ کے لئے موزوں ہوں۔
(2) دستور کے تابع، حصہ دوم کے باب 1 میں تفویض کردہ بنیادی حقوق میں سے کسی حق کے نفاذ کے لئے کسی عدالت عالیہ سے رجوع کرنے کا حق محدود نہیں کیا جائے گا۔
... 
(5) اس آرٹیکل میں، بجز اس کے کہ سیاق و سباق سے کچھ اور ظاہر ہو، ---
"شخص" میں کوئی ہیئت سیاسی یا ہیئت اجتماعی، وفاقی حکومت یا کسی صوبائی حکومت کی یا اس کے تحت کوئی ہیئت مجاز اور کوئی عدالت یا ٹریبونل شامل ہے، ماسوائے عدالت عظمی یا کسی عدالت عالیہ یا کسی ایسی عدالت یا ٹریبونل کے جو پاکستان کی مسلح افواج سے متعلق کسی قانون کے تحت قائم کیا گیا ہو؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 199)

Indigenous Peoples

(1) دستور کے تابع، وفاق کا عاملانہ اختیار مرکز کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات پر وسعت پذیر ہو گا، اور کسی صوبے کا عاملانہ اختیار اس میں شامل صوبے کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات پر وسعت پذیر ہو گا۔
(2) صدر، وقتاً فوقتاً، کسی صوبے میں شامل علاقہ جات یا ان کے کسی حصہ سے متعلق اس صوبے کے گورنر کو ایسی ہدایات دے سکے گا جو وہ ضروری خیال کرے، اور گورنر اس آرٹیکل کے تحت اپنے کارہائے منصبی کی انجام دہی میں مذکورہ ہدایات کو تعمیل کرے گا۔
(3) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کا کوئی ایکٹ وفاق کے زیرانتظام کسی قبائلی علاقے یا اس کے کسی حصے پر اطلاق پذیر نہ ہو گا، جب تک کہ صدر اس طرح ہدایات نہ دے، اور مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) یا کسی صوبائی اسمبلی کا کوئی ایکٹ صوبے کے زیرانتاظام کسی قبائلی علاقے یا اس کس کسی حصے پر اطلاق پذیر نہ ہو گا جب تک کہ اس صوبے کا گورنر جس میں وہ قبائلی علاقہ واقع ہو، صدر کی منظوری سے، اس طرح ہدایات نہ دے؛ اور کسی قانون سے متعلق کوئی ایسی ہدایات دیتے وقت، صدر یا، جیسی بھی صورت ہو، گورنر، یہ ہدایات دے سکے گا کہ اس قانون کا اطلاق کسی قبائلی علاقے پر، یا اس کے کسی مصرحہ حصے پر، ایسی مستثنیات اور ترمیمات کے ساتھ ہو گا جس کی صراحت اس ہدایت میں کر دی جائے۔
(4) دستور میں شامل کسی امر کے باوجود، صدر، مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کے اختیارات قانون سازی کے اندر کسی معاملے سے متعلق، اور کسی صوبے کا گورنر، صدر کی ماقبل منظوری سے، صوبائی اسمبلی کے اختیارات قانون سازی کے اندر کسی معاملے سے متعلق، صوبے کے زیرانتظام کسی قبائلی علاقے یا اس کے کسی ایسے حصے کے لئے جو اس صوبے میں واقع ہو، امن و امان اور بہتر نظم و نسق کے لئے ضوابط وضع کر سکے گا۔
(5) دستورمیں شامل کسی امر کے باوجود، صدر کسی معاملے سے متعلق، وفاق کر زیرانتظام کسی قبائلی علاقہ یا اس کے کسی حصہ کے امن و امان اور بہتر نظم و نسق کے لئے ضوابط وضع کر سکے گا۔
(6) صدر، کسی وقت بھی، فرمان کے ذریعے، ہدایت دے سکے گا کہ قبائلی علاقے کا تمام یا کوئی حصہ قبائلی علاقہ نہیں رہے گا، اور مذکورہ فرمان میں ایسے ضمنی اور ذیلی احکام شامل ہو سکیں کے جو صدر کو ضروری اور مناسب معلوم ہوں:
مگر شرط یہ ہے کہ اس شق میں کوئی امر اس اختیار سماعت پر اثر انداز نہ ہو گا جو عدالت عظمی یا کوئی عدالت عالیہ کسی قبائلی علاقہ سے متعلق یوم آغاز سے عین قبل استعمال کرتی تھی۔
(7) کسی قبائلی علاقے سے متعلق دستور کے تحت نہ عدالت عظمی اور نہ کوئی عدالت عالیہ اپنا اختیار سماعت استمعال کرے گی تاوقتیکہ مجلس شورٰی (پارلیمنٹ) بذریعہ قانون بصورت دیگر حکم نہ دے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس شق میں کوئی امر اس اختیار سماعت پر اثرانداز نہ ہو گا جو عدالت عظمی یا کوئی عدالت عالیہ کسی قبائلی علاقہ سے متعلق یوم آغاز سے عین قبل استعمال کرتی تھی۔
(آرٹیکل 247)

Limitations and/or Derogations

(2) مملکت کوئی ایسا قانون وضع نہیں کرے گی جو بایں طور عطاکردہ حقوق کو سلب یا کم کرے اور ہر وہ قانون جو اس شق کی خلاف ورزی میں وضع کیا جائے اس خلاف ورزی کی حد تک کالعدم ہو گا۔
۔ ۔ ۔
(5) اس باب کی رو سے عطاکردہ حقوق معطل نہیں کئے جائیں گے بجز جس طرح کہ دستور میں بالصراحت قرار دیا گیا ہے۔ (آرٹیکل 8)

Limitations and/or Derogations

(1) آرٹیکل 15، 16، 17، 18، 19 اور 24 میں شامل کوئی امر، جبکہ ہنگامی حالت کا اعلان نافذالعمل ہو، مملکت کے، جیسا کہ آرٹیکل 7 میں تعریف کی گئی ہے، کوئی قانون وضع کرنے یا کوئی عاملانہ قدم اٹھانے کے اختیار پر، جس کے کرنے یا اٹھانے کی وہ مجاز ہوتی اگر مذکورہ آرٹیکل میں شامل احکام نہ ہوتے، پابندی عائد نہیں کرے گا، مگر اس طرح وضع شدہ کوئی قانون، اس وقت جبکہ مذکورہ اعلان منسوخ کر دیا جائے یا نافذالعمل نہ رہے، اس عدم اہلیت کی حد تک غیر مؤثر ہو جائے گا اور منسوخ شدہ تصور ہو گا۔
(2) جس دوران ہنگامی حالت کا اعلان نافذالعمل ہو، صدر بذریعہ فرمان یہ اعلان کر سکے گا کہ حصہ دوم کے باب اول کی رو سے عطاکردہ بنیادی حقوق میں سے ان کے نفاذ کے لئے جن کی فرمان میں صراحت کر دی جائے کسی عدالت سے رجوع کرنے کا حق اور کسی عدالت میں کوئی کاروائی جو اس طرح مصرحہ حقوق میں سے کسی کے نفاذ کے لئے ہو یا جس میں اس حقوق میں سے کسی کی خلاف ورزی کے متعلق کسی سوال کا تعین مطلوب ہو، اس مدت کے لئے معطل رہے گی جس کے دوران اعلان نافذالعمل رہے اور ایسا کوئی فرمان پورے پاکستان یا اس کے کسی حصہ کے بارے میں صادر کیا جا سکے گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 233)

Marriage and Family Life

مملکت، شادی، خاندان ماں اور بچے کی حفاظت کرے گی۔ (آرٹیکل 35)

Marriage and Family Life

مملکت:
...
(ہ) منصفانہ اور نرم شرائط کار، اس امر کی ضمانت دیتے ہوئے کہ بچوں اور عورتوں سے ایسے پیشوں میں کام نہ لیا جائے گا جو ان کی عمر یا جنس کے لئے نامناسب ہوں، مقرر کرنے کے لئے، اور ملازم عورتوں کے لئے زچگی سے متعلق مراعات دینے کے لئے، احکام وضع کرے گی؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 37)

Minorities

... جس میں مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی حلقہ ہائے عمل میں اس قابل بنایا جائے گا کہ وہ اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات و مقتضیات کے مطابق، جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، ترتیب دے سکیں؛ جس میں قرار واقعی انتظام کیا جائے گا کہ اقلیتیں آزادی سے اپنے مذاہب پر عقیدہ رکھ سکیں اور ان پر عمل کر سکیں اور اپنی ثقافتوں کو ترقی دے سکیں؛ ...
 جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات، قانون کی نظر میں برابری، معاشرتی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہوگی؛
جس میں اقلیتوں اور پسماندہ طبقوں کے جائز مفادات کے تحفظ کا قرار واقعی انتظام کیا جائے گا؛ ... (تمہید)

Minorities

مملکت ، اقلیتوں کے جائز حقوق اور مفادات کا ، جن میں وفاقی اور صوبائی ملازمتوں میں ان کی مناسب نمائندگی شامل ہے ، تحفظ کرے گی۔ (آرٹیکل 36)

Minorities

... جس میں قرار واقعی انظام کیا جائے گا کہ اقلیتیں آزادی سے اپنے مذہب پر عقیدہ رکھ سکیں اور ان پر عمل کر سکیں اور اپنی ثقافتوں کو ترقی دے سکیں؛ ... 
جس میں اقلیتوں اور پسماندہ طبقوں کے جائز مفادات کے تحفظ کا قرارواقعی انتظام کیا جائے گا؛ ... (قرارداد مقاصد)

Participation in Public Life and Institutions

(1) کسی شہری کے ساتھ جو بہ اعتبار دیگر پاکستان کی ملازمت میں تقرر کا اہل ہو، کسی ایسے تقرر کے سلسلے میں محض نسل، مذہب، ذات، جنس، سکونت یا مقام پیدائش کی بنا پر امتیاز روا نہیں رکھا جائے گا۔
مگر شرط یہ ہے کہ یوم آغاز سے زیادہ سے زیادہ چالیس سال کی مدت تک کسی طبقے یا علاقے کے لوگوں کے لیے آسامیاں محفوظ کی جا سکیں گی تا کہ پاکستان کی ملازمت میں ان کو مناسب نمائندگی حاصل ہو جائے:
مزید شرط یہ ہے کہ مذکورہ ملازمت کے مفاد میں مصرحہ آسامیاں یا ملازمتیں کسی ایک جنس کے افراد کے لیے محفوظ کی جا سکیں گی اگر مذکورہ آسامیوں یا ملازمتوں میں ایسے فرائض اور کارہائے منصبی کی انجام دہی ضروری ہوجو دوسری جنس کے افراد کی جانب سے مناسب طور پر انجام نہ دئیے جا سکتے ہوں:
مگر شرط یہ بھی ہے کہ پاکستان کی ملازمت میں کسی بھی طبقے یا علاقے کی کم نمائندگی کی مذکورہ طریقہ کار پر تلافی کی جائے گی جیسا مجلسِ شوریٰ (پارلیمنٹ) کے ایکٹ کے ذریعے تعین کرے۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 27)

Participation in Public Life and Institutions

قومی زندگی کے تمام شعبوں میں عورتوں کی مکمل شمولیت کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے۔ (آرٹیکل 34)

Participation in Public Life and Institutions

مملکت:
...
(و) مختلف علاقوں کے افراد کو، تعلیم، تربیت، زرعی اور صنعتی ترقی اور دیگر طریقوں سے اس قابل بنائے گی کہ وہ ہر قسم کی قومی سرگرمیوں میں، جن میں ملازمت پاکستان میں خدمت بھی شامل ہے، پورا پورا حصہ لے سکیں؛
... (آرٹیکل 37)

Political Rights and Association

(1) پاکستان کی حاکمیتِ اعلی یا سالمیت، امنِ عامہ یا اخلاق کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع، ہر شہری کو انجمنیں یا یونینیں بنانے کا حق حاصل ہو گا۔
(2) ہر شہری کو، جو ملازمتِ پاکستان میں نہ ہو، پاکستان کی حاکمیت اعلی یا سالمیت کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع کوئی سیاسی جماعت بنانے یا اس کا رکن بننے کا حق ہوگا اور مذکورہ قانون میں قرار دیا جائے گا کہ جب کہ وفاقی حکومت یہ اعلان کر دے کہ کوئی سیاسی جماعت ایسے طریقے پر بنائی گئی ہے یا عمل کر رہی ہے جو پاکستان کی حاکمیتِ اعلی یا سالمیت کے لیے مضر ہے تو وفاقی حکومت مذکورہ اعلان سے پندرہ دن کے اندر معاملہ عدالتِ عظمٰی کے حوالے کر دے گی جس کا مذکورہ حوالے پر فیصلہ قطعی ہوگا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 17)

Political Rights and Association

(2) کوئی شخص ووٹ دینے کا حقدار ہو گا اگر-
(الف) وہ پاکستان کا شہری ہو؛
(ب) اس کی عمر اٹھارہ سال سے کم نہ ہو؛
(ج) اس کا نام انتخابی فہرست میں موجود ہو؛ اور
(د) اسے کسی با اختیار عدالت نے فاتر العقل قرار نہ دیا ہو۔
... (آرٹیکل 51)

National level

(1) قومی اسمبلی میں خواتین اور غیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں کے بشمول ارکان کی تین سو بیالیس نشستیں ہوں گی۔

(4) شق (3) میں محولہ نشستوں کی تعداد کے علاوہ، قومی اسمبلی میں، غیر مسلموں کے لئے دس نشستیں مخصوص کی جائیں گی۔
(5) قومی اسمبلی میں نشستیں سرکاری طور پر شائع شدہ گزشتہ آخری مردم شماری کے مطابق آبادی کی بنیاد پر ہر صوبے، وفاق کے زیرِ انتظام قبائلی علاقہ جات اور وفاقی دارالحکومت کے لئے متعین کی جائیں گی۔
(6) قومی اسمبلی کے لئے انتخاب کی غرض سے، -
(الف) عام نشستوں کے لئے انتخابی حلقے ایک رکنی علاقائی حلقے ہوں گے اور مذکورہ نشستوں کو پُر کرنے کے لئے ارکان بلاواسطہ اور آزادانہ ووٹ کے ذریعے قانون کے مطابق منتخب کئے جائیں گے؛
(ب) ہر ایک صوبہ خواتیں کے لئے مخصوص تمام نشستوں کے لئے جو متعلقہ صوبوں کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں واحد حلقہ انتخاب ہو گا؛
(ج) غیر مسلموں کے لئے مخصوص تمام نشستوں کے لئے حلقۂ انتخاب پورا ملک ہو گا؛
(د) خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے جو کسی صوبے کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعے قومی اسمبلی میں متعلقہ صوبہ سے ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں؛ اور
(ہ) غیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعے قومی اسمبلی میں ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں۔ (آرٹیکل 51)

National level

(1) سینٹ ایک سو ارکان پر مشتمل ہو گی جن میں سے -  
(الف) چودہ ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ب) آٹھ وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقوں سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(ج) دو عام نشستوں پر اور ایک خاتون اور ایک ٹیکنوکریٹ بشمول عالم وفاقی دارالحکومت سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(د) چار خواتین ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ہ) چار ٹیکنوکریٹ بشمول علماء ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے۔
(و) چار غیر مسلم، ہر صوبے سے ایک، ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ پیراگراف (و) دستور (اٹھارویں ترمیم) ایکٹ 2010 کے نفاذ کے بعد سینٹ کے اگلے الیکشن سے مؤثر ہو گا۔
(2) سینٹ میں ہر صوبے کے لئے متعین نشستوں کو پُر کرنے کے لئے انتخاب، واحد قابل انتقال ووٹ کے ذریعے متناسب نمائندگی کے نظام کے مطابق کیا جائے گا۔
(3) سینٹ ٹوٹنے کے تابع نہیں ہو گی لیکن اس کے ارکان کی معیاد، جو بحسب ذیل سبکدوش ہوں گے، چھ سال ہو گی:- (الف) شق (1) کے پیرا (الف) کے محولہ ارکان میں سے، سات پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ (ب) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ب) میں محولہ ارکان میں سے چار پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور چار اگلے تیس سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛
(ج) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ج) میں محولہ ارکان میں سے، ---
(اول) عام نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور دوسرا اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛
(دوم) ٹیکنوکریٹ کی نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور خواتین کے لئے مخصوص نشست پر منتخب ہونے والا ایک اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛ (د) مذکورہ بالا شق کے پیرا (د) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ اور
(ہ) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ہ) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی پہلی مدت کی نشستوں کے لئے قرعہ ڈالا جائے گا کہ کون سے دو ارکان پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے۔
(و) مذکورہ بالا شق کے پیرا (و) میں محولہ ارکان میں سے دو پہلے تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے سال تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی نشستوں کی پہلی میعاد کے لیے قرعہ اندازی کرے گا کہ کون سا رکن پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائے گا۔ ...  (آرٹیکل 59)

National level

(6) جب قومی اسمبلی یا کسی صوبائی اسمبلی میں خواتین یا غیر مسلموں کے لئے کوئی مخصوص نشست کسی رکن کی موت، استعفی یا نا اہلیت کی وجہ سے خالی ہوجائے، تو اسے اس سیاسی جماعت کی طرف سے جس کے رکن نے مذکورہ شست خالی کی ہو آخری عام انتخاب کے لئے الیکشن کمیشن کو پیش کردہ امیدواروں کی جماعتی فہرست میں بلحاظ تقدم اگلے شخص کے ذریعہ پُر کیا جائے گا۔
مگر شرط یہ ہے کہ اگر کسی بھی وقت پر جماعتی فہرست ختم ہو جائے تو متعلقہ سیاسی جماعت بعد ازاں ہونے والی کسی آسامی کے لئے مزید نام پیش کر سکتی ہے۔ (آرٹیکل 224)

Subnational levels

(1) ہرصوبائی اسمبلی عام نشستوں اورخواتین اورغیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں پر مشتمل ہوگی جس طرح کہ ذیل میں صراحت کی گئی ہے- ...
(3) کسی صوبائی اسمبلی کے انتخاب کی غرض سے، -
(الف) عام نشستوں کے لئے انتخابی حلقے ایک رکنی علاقائی حلقے ہوں گے اور مذکورہ نشستوں کو پُر کرنے کے لئے ارکان بلاواسطہ آزادانہ ووٹ کے ذریعے منتخب کئے جائیں گے؛
(ب) شق (1) کے تحت متعلقہ صوبوں کے لئے تعین کردہ خواتین اورغیرمسلموں کے لئےمخصوص تمام نشستوں کے لئے ہرایک صوبہ واحد انتخابی حلقہ ہو گا؛
(ج) شق(1) کے تحت کسی صوبہ کے لئے تعین کردہ خواتین اورغیرمسلموں کے لئےمخصوص نشستوں کو پُر کرنے کے لئے ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کے امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعہ صوبائی اسمبلی میں ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پرمنتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے نام کی اشاعت کے تین یوم کے اندر با ضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہوجائیں؛ (آرٹیکل 106)

Subnational levels

(6) جب قومی اسمبلی یا کسی صوبائی اسمبلی میں خواتین یا غیر مسلموں کے لئے کوئی مخصوص نشست کسی رکن کی موت، استعفی یا نا اہلیت کی وجہ سے خالی ہوجائے، تو اسے اس سیاسی جماعت کی طرف سے جس کے رکن نے مذکورہ شست خالی کی ہو آخری عام انتخاب کے لئے الیکشن کمیشن کو پیش کردہ امیدواروں کی جماعتی فہرست میں بلحاظ تقدم اگلے شخص کے ذریعہ پُر کیا جائے گا۔
مگر شرط یہ ہے کہ اگر کسی بھی وقت پر جماعتی فہرست ختم ہو جائے تو متعلقہ سیاسی جماعت بعد ازاں ہونے والی کسی آسامی کے لئے مزید نام پیش کر سکتی ہے۔ (آرٹیکل 224)

Political Parties

(2) ہر شہری کو، جو ملازمتِ پاکستان میں نہ ہو، پاکستان کی حاکمیت اعلی یا سالمیت کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع کوئی سیاسی جماعت بنانے یا اس کا رکن بننے کا حق ہوگا اور مذکورہ قانون میں قرار دیا جائے گا کہ جب کہ وفاقی حکومت یہ اعلان کر دے کہ کوئی سیاسی جماعت ایسے طریقے پر بنائی گئی ہے یا عمل کر رہی ہے جو پاکستان کی حاکمیتِ اعلی یا سالمیت کے لیے مضر ہے تو وفاقی حکومت مذکورہ اعلان سے پندرہ دن کے اندر معاملہ عدالتِ عظمٰی کے حوالے کر دے گی جس کا مذکورہ حوالے پر فیصلہ قطعی ہو گا۔
(3) ہر سیاسی جماعت قانون کے مطابق اپنے مالی ذرائع کے ماخذ کے لیے جواب دہ ہو گی۔ (آرٹیکل 17)

Electoral Bodies

(1) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کے دونوں ایوانوں، صوبائی اسمبلیوں کے انتخاب کی غرض کے لئے اور ایسے دیگر عوامی عہدوں کے انتخاب کے لئے جس طرح کہ قانون کے ذریعہ یا جب تک مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کی طرف سے ایسا قانون وضع نہ کر لیا جائے صدر کے فرمان کی رو سے صراحت کر دی جائے، اس آرٹیکل کے مطابق الیکشن کمیشن تشکیل دیا جائے گا۔
(2) الیکشن کمیشن حسب ذیل پر مشتمل ہو گا -
(الف) کمشنر جو کمیشن کا چیئرمین ہو گا؛ اور
(ب) چار ارکان پر، جن میں سے ہر ایک (ہر ایک صوبے سے) عدالت عالیہ کا جج ہو گا جسے صدر متعلقہ عدالت عالیہ کے چیف جسٹس اور کمشنر سے مشورے کے بعد مقرر کرے گا۔
(3) کسی انتخاب کے سلسے میں تشکیل کردہ الیکشن کمیشن کا یہ فرض ہو گا کہ وہ انتخاب کا انتظام کرے اور اسے منعقد کرائے اور ایسے انتظامات کرے جو اس امر کے اطمینان کے لئے ضروری ہوں کہ انتخاب ایمانداری، حق اور انصاف کے ساتھ اور قانون کے مطابق منعقد ہو اور یہ کہ بدعنوانیوں کا سدباب ہو سکے۔ (آرٹیکل 218)

Head of State

(1) پاکستان کا ایک صدر ہو گا جو مملکت کا سربراہ ہو گا اور جمہوریہ کے اتحاد کی نمائندگی کرے گا۔
(2) کوئی شخص اس وقت تک صدر کی حیثیت سے انتـخاب کا اہل نہیں ہو گا تاوقتیکہ وہ کم از کم پینتالیس سال کی عمر کا مسلمان نہ ہو اور قومی اسمبلی کا رکن منتخب ہونے کا اہل نہ ہو۔
(3) منتخب کیا جانے والا صدر جدول دوم کے احکام کے مطابق ذیل پر مشتمل انتخابی ادارے کے ارکان کی طرف سے منتخب کیا جائے گا -
(الف) دونوں ایوانوں کے ارکان؛ اور۔
(ب) صوبائی اسمبلیوں کے ارکان۔
... (آرٹیکل 41)

Government

(1) دستور کے مطابق، وفاقی حکومت کی جانب سے وفاق کا عاملانہ اختیار صدر کے نام سے استعمال کیا جائے گا، جو وزیراعظم اور وفاقی وزراء پر مشتمل ہو گا، جو وزیراعظم کے ذریعے کام کریں گے جو کہ وفاق کا چیف ایگزیکٹیو ہو گا؛
... (آرٹیکل 90)

Government

(1) صدر کو اس کے کارہائے منصبی کی انجام دہی میں مدد اور مشورہ دینے کے لئے وزراء کی ایک کابینہ ہو گی جس کا سربراہ وزیراعظم ہو گا۔

(4) وزیراعظم قومی اسمبلی کے کل اراکین کی تعداد کی اکثریت رائے دہی کے ذریعے نامزد کیا جائے گا: ... (آرٹیکل 91)

Government

(1) آرٹیکل 91 کی شقات [(9) اور (10)] کے تابع، صدر، وزیراعظم کے مشورے پر مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کے ارکان میں سے وفاقی وزراء اور وزرائے ممکلت کا تقرر کرے گا: ... (آرٹیکل 92)

Legislature

پاکستان کی ایک مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) ہو گی جو صدر اور دو ایوانوں پر مشتمل ہو گی جو بالترتیب قومی اسمبلی اور سینٹ کے نام سے موسوم ہوں گے۔ (آرٹیکل 50)

Legislature

(1) قومی اسمبلی میں خواتین اورغیر مسلموں کے لئے مخصوص نششتوں کے بشمول ارکان کی تین سو بیالیس نششتیں ہونگی۔

(4) شق (3) میں محولہ نشستوں کی تعداد کے علاوہ، قومی اسمبلی میں، غیر مسلموں کے لئے دس نشستیں مخصوص کی جائیں گی۔
(5) قومی اسبلی میں نشستیں سرکاری طور پرشائع شدہ گزشتہ آخری مردم شماری کے مطابق آبادی کی بنیاد پر ہر صوبے، وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات اور وفاقی درالحکومت کے لئے متعین کی جائیں گی،-
(6) قومی اسمبلی کے لئے انتخاب کی غرض سے، -
(الف) عام نشستوں کے لئے انتخابی حلقے ایک رکنی علاقائی حلقے ہوں گے اور مذکورہ نشستوں کر پر کرنے کے لئے ارکان بلاواسطہ اور آزادانہ ووٹ کے ذریعے قانون کے مطابق منتخب کئے جائیں گے؛
(ب) ہر ایک صوبہ خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے جو متعلقہ صوبوں کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں واحد حلقۂ انتخاب ہو گا؛
(ج) خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے حلقۂ انتخاب پورا ملک ہو گا؛
(د) خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے جو کسی صوبے کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام ک ذریعے قومی اسمبلی میں متعلقہ صوبہ سے ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل شدہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں؛ اور
(ہ) غیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعے قومی اسمبلی میں ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں۔ (آرٹیکل 51)

Legislature

(1) سینٹ ایک سو ارکان پر مشتمل ہو گی جن میں سے -
(الف) چودہ ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ب) آٹھ وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقوں سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(ج) دو عام نشستوں پر اور ایک خاتون اور ایک ٹیکنوکریٹ بشمول عالم وفاقی دارالحکومت سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(د) چار خواتین ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ہ) چار ٹیکنوکریٹ بشمول علماء ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے۔
(و) چار غیر مسلم، ہر صوبے سے ایک، ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ پیراگراف (و) دستور (اٹھارویں ترمیم) ایکٹ 2010 کے نفاذ کے بعد سینٹ کے اگلے الیکشن سے مؤثر ہو گا۔
(2) سینٹ میں ہر صوبے کے لئے متعین نشستوں کو پُر کرنے کے لئے انتخاب، واحد قابل انتقال ووٹ کے ذریعے متناسب نمائندگی کے نظام کے مطابق کیا جائے گا۔
(3) سینٹ ٹوٹنے کے تابع نہیں ہو گی لیکن اس کے ارکان کی معیاد، جو بحسب ذیل سبکدوش ہوں گے، چھ سال ہو گی:- (الف) شق (1) کے پیرا (الف) کے محولہ ارکان میں سے، سات پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ (ب) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ب) میں محولہ ارکان میں سے چار پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور چار اگلے تیس سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛
(ج) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ج) میں محولہ ارکان میں سے، -
(اول) عام نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور دوسرا اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛
(دوم) ٹیکنوکریٹ کی نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور خواتین کے لئے مخصوص نشست پر منتخب ہونے والا ایک اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛ (د) مذکورہ بالا شق کے پیرا (د) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ اور
(ہ) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ہ) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی پہلی مدت کی نشستوں کے لئے قرعہ ڈالا جائے گا کہ کون سے دو ارکان پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے۔
(و) مذکورہ بالا شق کے پیرا (و) میں محولہ ارکان میں سے دو پہلے تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے سال تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی نشستوں کی پہلی میعاد کے لیے قرعہ اندازی کرے گا کہ کون سا رکن پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائے گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 59)

Legislature

(1) کوئی شخص مجلس شوریٰ (پارلیمینٹ) کارکن منتخب ہونے یا چنے جانے کا اہل نہیں ہو گا اگر۔
(الف) وہ پاکستان کا شہری نہ ہو؛
(ب) وہ قومی اسمبلی کی صورت میں پچیس سال سے کم عمر کا ہو اور کسی انتخابی فہرست میں ووٹر کی حیثیت سے -
(اول) پاکستان کے کسی حصہ میں، کسی عام نشست یا غیر مسلموں کے لئے مخصوص کسی نشست پرانتخاب کے لۓ درج نہ ہو؛ اور
(دوم) کسی صوبہ میں ایسے علاقے میں جہاں سے وہ خواتین کے لئے مخصوص نشست پر انتخاب کے لئے رکنیت چاہتا ہو، درج نہ ہو،
(ج) وہ سینٹ کی صورت میں، تیس سال سے کم عمر کا ہو اور کسی صوبے میں کسی علاقے میں یا، جیسی بھی صورت ہو، وفاقی درالحکومت یا وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات میں جہاں سے وہ رکنیت چاہتا ہو بطورووٹردرج نہ ہو؛
(د) وہ اچھے کردار کا حامل نہ ہو اورعام طور پراحکام اسلام سے انحراف میں مشہور ہو؛ (ہ) وہ اسلامی تعلیمات کا خاطرخواہ علم نہ رکھتا ہو اور اسلام کے مقررکردہ فرائض کا پابند نیز کبیرہ گناہوں سے مجتنب نہ ہو؛
(و) وہ سمجھدار، پارسا نہ ہو اور فاسق ہو اور ایماندار اور امین نہ ہو؛
(ز) کسی اخلاقی پستی میں ملوث ہونے یا جھوٹی گواہی دینے کے جرم میں سزایافتہ ہو؛
(ح) اس نے قیام پاکستان کے بعد ملک کی سالمیت کے خلاف کام کیا ہو یا نظریہ پا کستان کی مخالفت کی ہو:
(2) پیرا(د) اور(ہ) میں مصرحہ نااہلیتوں کا کسی ایسے شخص پر اطلاق نہیں ہو گا جو غیرمسلم ہو، لیکن ایسا شخص اچھی شہرت کا حامل ہو گا۔ (آرٹیکل 62)

Property, Inheritance and Land Tenure

دستور اور مفادِ عامہ کے پیشِ نظر قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع، ہر شہری کو جائیداد حاصل کرنے، قبضہ میں رکھنے اور فروخت کرنے کا حق ہوگا۔ (آرٹیکل 23)

Property, Inheritance and Land Tenure

(1) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) بذریعہ قانون -
(الف) ایسی جائیداد یا اس کی کسی قسم کے بارے میں جو کوئی شخص ملکیت، تصرف، قبضہ یا نگرانی میں رکھ سکے گا انتہائی تحیدات مقرر کر سکے گی؛ اور ۔ ۔ ۔
(2) کوئی قانون جو کسی شخص کو اس رقبہ اراضی سے زیادہ اراضی کی منفعتی ملکیت یا منفعتی قبضہ کی اجازت دے جو وہ یوم آغاز سے عین قبل جائز طور پر منفعتی ملکیت میں رکھ سکتا تھا یا منفعتی قبضہ میں لا سکتا تھا، کالعدم ہو گا۔ (آرٹیکل 253)

Protection from Violence

مملکت استحصال کی تمام اقسام کے خاتمہ اور اس بنیادی اصول کی تدریجی تکمیل کو یقینی بنائے گی کہ ہر کسی سے اس کی اہلیت کے مطابق کام لیا جائے گا اور ہر کسی کو اس کے کام کے مطابق معاوضہ دیا جائے۔ (آرٹیکل 3)

Protection from Violence

ہر شہری کا (خواہ کہیں بھی ہو) اور کسی دوسرے شخص کا جو فی الوقت پاکستان میں ہو، یہ ناقابلِ انتقال حق ہے کہ اسے قانون کا تحفظ حاصل ہو اور اس کے ساتھ قانون کے مطابق سلوک کیا جائے
 (2) خصوصا –
(الف) کوئی ایسی کاروائی نہ کی جائے جو کسی شخص کی جان، آزادی، جسم، شہرت یا املاک کے لیے مضر ہو، سوائے جب کہ قانون اس کی اجازت دے؛
... (آرٹیکل 4)

Protection from Violence

(1) غلامی معدوم اور ممنوع ہے اور کوئی قانون کسی بھی صورت میں اسے پاکستان میں رواج دینے کی اجازت نہیں دے گا یا سہولت بہم پہنچائے گا۔
(2) بیگار کی تمام صورتوں اور انسانوں کی خرید و فروخت کو ممنوع قرار دیا جاتا ہے۔
... (آرٹیکل 11)

Protection from Violence

(2) کسی شخص کو شہادت حاصل کرنے کی غرض سے اذیت نہیں دی جائے گی۔ (آرٹیکل 14)

Public Institutions and Services

مملکت، شادی، خاندان ماں اور بچے کی حفاظت کرے گی۔ (آرٹیکل 35)

Public Institutions and Services

مملکت -
(الف) عام آدمی کے معیارِ زندگی کو بلند کرکے، دولت اور وسائل پیدوار و تقسیم کو چند اشخاص کے ہاتھوں میں اس طرح جمع ہونے سے روک کر کہ اس سے مفادِ عامہ کو نقصان پہنچے اور آجر و ماجور اور زمیندار اور مزارع کے درمیان حقوق کی منصفانہ تقسیم کی ضمانت دے کر بلا لحاظ جنس، ذات، مذہب یا نسل، عوام کی فلاح و بہبود کے حصول کی کوشش کرے گی؛
(ب) تمام شہریوں کے لیے، ملک میں دستیاب وسائل کے اندر، معقول آرام و فرصت کے ساتھ کام اور مناسب روزی کی سہولتیں مہیا کرے گی؛
(ج) پاکستان کی ملازمت میں، یا بصورت دیگر ملازم تمام اشخاص کو لازمی معاشری بیمہ کے ذریعے یا کسی اور طرح معاشرتی تحفظ مہیا کرے گی؛
(د) ان تمام شہریوں کے لیے جو کمزوری، بیماری یا بیروزگاری کے باعث مستقل یا عارضی طور پر اپنی روزی نہ کما سکتے ہوں بلا لحاظ جنس، ذات، مذہب یا نسل، بنیادی ضروریات زندگی مثلا خوراک، لباس، رہائش، تعلیم اور طبی امداد مہیا کرے گی؛
(ہ) پاکستان کی ملازمت کے مختلف درجات میں اشخاص سمیت، افراد کی آمدنی اور کمائی میںعدم مساوات کو کم کرے گی؛
... (آرٹیکل 38)

Status of the Constitution

(2) دستور اور قانون کی اطاعت ہر شہری خواہ وہ کہیں بھی ہو اور ہر اس شخص کی جو فی الوقت پاکستان میں ہو واجب التعمیل ذمہ داری ہے (آرٹیکل 5)

Status of the Constitution

(1) کوئی قانون، یا رسم یا رواج جو قانون کا حکم رکھتا ہو، تناقض کی اس حد تک کالعدم ہو گا جس حد تک وہ اس باب میں عطاکردہ حقوق کا نقیض ہو۔
(2) مملکت کوئی ایسا قانون وضع نہیں کرے گی جو بایں طور عطاکردہ حقوق کو سلب یا کم کرے اور ہر وہ قانون جو اس شق کی خلاف ورزی میں وضع کیا جائے اس خلاف ورزی کی حد تک کالعدم ہو گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 8)

Status of the Constitution

دستور میں شامل کسی امر کے باوجود اس باب کے احکام مؤثر ہوں گے۔ (آرٹیکل 203 الف)

Religious Law

چونکہ اللہ تبارک و تعالی ہی پوری کائنات کا بلا شرکتِ غیرے حاکم مطلق ہے اور پاکستان کے جمہور کو جو اختیار و اقتدار اللہ کی مقرر کردہ حدود کے اندر استعمال کرنے کا حق ہوگا، وہ ایک مقدس امانت ہے؛ ۔ ۔ ۔
جس میں جمہوریت، آزادی، مساوات، رواداری اور عدل عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے، پوری طرح عمل کیا جائے گا؛
جس میں مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی حلقہ ہائے عمل میں اس قابل بنایا جائے گا کہ وہ اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات و مقتضیات کے مطابق، جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، ترتیب دے سکیں؛
... (تمہید)

Religious Law

اسلام پاکستان کا مملکتی مذہب ہوگا۔ (آرٹیکل 2)

Religious Law

(1) پاکستان کے مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی طور پر اپنی زندگی اسلام کے بنیادی اصولوں اور اساسی تصورات کے مطابق مرتب کرنے کے قابل بنانے کے لیے اور انہیں ایسی سہولتیں مہیا کرنے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے جن کی مدد سے وہ قرآن پاک اور سنت کے مطابق زندگی کا مفہوم سمجھ سکیں۔
(2) پاکستان کے مسلمانوں کے بارے میں مملکت مندرجہ ذیل کے لیے کوشش کرے گی:-
(الف) قرآن پاک اور اسلامیات کی تعلیم کو لازمی قرار دینا ، عربی زبان سیکھنے کی حوصلہ افزائی کرنا اور اس کے لیے سہولت بہم پہنچانا اور قرآن پاک کی صحیح اور من و عن طباعت اور اشاعت کا اہتمام کرنا؛
(ب) اتحاد اور اسلامی اخلاقی معیاروں کی پابندی کو فروغ دینا؛ اور
(ج) زکوۃ ، عشر ، اوقاف اور مساجد کی باقاعدہ تنظیم کا اہتمام کرنا۔ (آرٹیکل 31)

Religious Law

دستور میں شامل کسی امر کے باوجود اس باب کے احکام مؤثر ہوں گے۔ (آرٹیکل 203 الف)

Religious Law

اس باب14 میں، تاوقتیکہ کوئی امر موضوع یا سیاق و سباق کے منافی نہ ہو، -
...
(ج) "قانون" میں کوئی رسم یا رواج شامل ہے جو قانون کا اثر رکھتا ہو مگر اس میں دستور، مسلم شخصی قانون، کسی عدالت یا ٹریبونل کے ضابطہ کار سے متعلق کوئی قانون یا، اس بات کے آغاذ نفاذ سے دس سال کی مدت گزرنے تک، کوئی مالی قانون یا محصولات یا فیسوں کے عائد کرنے اور جمع کرنے یا بنکاری یا بیمہ کے عمل اور طریقہ سے متعلق کوئی قانون شامل نہیں ہے؛
... (آرٹیکل 203ب)

Religious Law

(1) عدالت، (یا تو خود اپنی تحریک پر یا) پاکستان کے کسی شہری یا وفاقی حکومت یا کسی صوبائی حکومت کی درخواست پر اس سوال کا جائزہ لے سکے گی اور فیصلہ کر سکے گی کہ آیا کوئی قانون یا قانون کا کوئی حکم ان اسلامی احکام ے منافی ہے یا نہیں جس طرح کہ قرآن پاک اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے جن کا حوالہ بعد ازیں اسلامی احکام کے طور پر دیا گیا ہے۔
... (آرٹیکل 203 د)

Religious Law

(1) تمام موجودہ قوانین کو قرآن پاک اور سنت میں منضبط اسلامی احکام کے مطابق بنایا جائے گا، جن کا اس حصہ میں بطور اسلامی احکام حوالہ دیا گيا ہے، اور ایسا کوئی قانون وضع نہیں کیا جائے گا جومذکورہ احکام کے منافی ہو۔ [تشریح:- کسی مسلم فرقے کے قانونی شخصی پر اس شق کا اطلاق کرتے ہوئے، عبارت "قرآن و سنت" سے مذکورہ فرقے کی کی ہوئی توضیح کے مطابق قرآن اور سنت مراد ہوگی۔]
(2) شق (1) کے احکام کو صرف اس طریقہ کے مطابق نافذ کیا جائے گا جو اس حصہ میں منضبط ہے۔
(3) اس حصہ میں کسی امر کا غیر مسلم شہریوں کے قوانین شخصی یا شہریوں کے بطور ان کی حیثیت پر اثر نہیں پڑے گا- (آرٹیکل 227)

Religious Law

(1) یوم آغاز سے نوے دن کی مدت کے اندر اسلامی نظریات کی ایک کونسل تشکیل کی جائے گی جس کا اس حصے میں بطور اسلامی کونسل حوالہ دیا گیا ہے۔
(2) اسلامی کونسل کم ازکم آٹھ اور زیادہ سے زیادہ [بیس] ایسے ارکان پر مشتمل ہو گی جس طرح کہ صدر ان اشخاص میں سے مقرر کرے، جنہیں اسلام کے اصولوں اور فلسفے کا جس طرح کہ قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گيا ہے علم ہو یا پاکستان کے اقتصادی، سیاسی، قانونی اور انتظامی مسائل کا فہم و ادراک ہو۔
(3) اسلامی کونسل کے ارکان مقرر کرتے وقت ان امور کا تعین کرے گا کہ -
(الف) جہاں تک قابل عمل ہو کونسل میں مختلف مکاتب فکر کو نمائندگی حاصل ہو؛ (ب) کم ازکم دو ارکان ایسے اشخاص ہوں جن میں سے ہر ایک عدالت عظمٰی یا کسی عدالیت عالیہ کا جج ہو یا رہا ہو؛ (ج) کم ازکم چار ارکان ایسے ہوں جن میں سے ہر ایک کم سے کم پندرہ سال کی مدت سے اسلامی تحقیق یا تدریس سے وابستہ چلا آ رہا ہو؛ اور
(د) کم از کم ایک رکن خاتون ہو۔
... (آرٹیکل 228)

Religious Law

(1) اسلامی کونسل کے کارہائے منصبی حسب ذیل ہوں گے -
(الف) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) اور صوبائی اسمبلیوں سے ایسے ذرائے اور وسائل کی سفارش کرنا جن سے پاکستان کے مسلمانوں کو اپنی زندگیاں انفرادی اور اجتماعی طور پر ہر لحاظ سے اسلام کے ان اصولوں اور تصورات کے مطابق ڈھالنے کی ترغیب اور امداد ملے جن کا قرآن پاک اور سنت میں تعین کیا گیا ہے؛
(ب) کسی ایوان، کسی صوبائی اسمبلی، صدر یا کسی گورنر کو کسی ایسے سوال کے بارے میں مشورہ دینا جس میں کونسل سے اس بابت رجوع کیا گیا ہو کہ آیا کوئی مجوزہ قانون اسلامی احکام کے منافی ہے یا نہیں؛
(ج) ایسی تدابیر کی جن سے نافذالعمل قوانین کو اسلامی احکام کے مطابق بنایا جائے گا نیز ان مراحل کی جن سے گزر کر محولہ تدابیر کا نفاذ عمل میں لانا چاہئے، سفارش کرنا؛ اور
(د) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) اور صوبائی اسمبلیوں کی رہنمائی کے لئے اسلام کے ایسے احکام کی ایک موزوں شکل میں تدوین کرنا جنہیں قانونی طور پر نافذ کیا جا سکے۔;
… (آرٹیکل 230)

Religious Law

... جس میں جمہوریت، آزادی، مساوات، رواداری اور عدل عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے، پوری طرح عمل کیا جائے گا؛
جس میں مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی حلقہ ہائے عمل میں اس قابل بنایا جائے گا کہ وہ اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات و مقتضیات کے مطابق، جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، ترتیب دے سکیں؛ ... (قرارداد مقاصد)

Customary Law

(1) کوئی قانون، یا رسم یا رواج جو قانون کا حکم رکھتا ہو، تناقض کی اس حد تک کالعدم ہو گا جس حد تک وہ اس باب میں عطاکردہ حقوق کا نقیض ہو۔
... (آرٹیکل 8)

Customary Law

اس باب میں، تاوقتیکہ کوئی امر موضوع یا سیاق و سباق کے منافی نہ ہو، -
...
(ج) "قانون" میں کوئی رسم یا رواج شامل ہے جو قانون کا اثر رکھتا ہو مگر اس میں دستور، مسلم شخصی قانون، کسی عدالت یا ٹریبونل کے ضابطہ کار سے متعلق کوئی قانون یا، اس بات کے آغاذ نفاذ سے دس سال کی مدت گزرنے تک، کوئی مالی قانون یا محصولات یا فیسوں کے عائد کرنے اور جمع کرنے یا بنکاری یا بیمہ کے عمل اور طریقہ سے متعلق کوئی قانون شامل نہیں ہے؛
... (آرٹیکل 203ب)

Affirmative Action (Broadly)

English

The State shall encourage local Government institutions composed of elected representatives of the areas concerned and in such institutions special representation will be given to peasants, workers and women. (Art. 32)

Urdu

مملکت متعلقہ علاقوں کے منتخب نمائندوں پر مشتمل بلدیاتی اداروں کی حوصلہ افزائی کرے گی اور ایسے اداروں میں کسانوں، مزدوروں اور عورتوں کو خصوصی نمائندگی دی جائے گی۔ (آرٹیکل 32)

Citizenship and Nationality

English

4. Nationality, citizenship and naturalisation. (Fourth Schedule, Federal Legislative List, Part I)

Urdu

(4)  قومیت، شہریت، وطن گزینی۔ (جدول چہارم، وفاقی قانون کی فہرست، حصہ اول)

Jurisdiction and Access

English

(1) Subject to this Article, the Supreme Court shall have jurisdiction to hear and determine appeals from judgements, decrees, final orders or sentences of a High Court.
(2) An appeal shall lie to the Supreme Court from any judgement, decree, final order or sentence of a High Court-

(f) if the High Court certifies that the case involves a substantial question of law as to the interpretation of the Constitution.
… (Art. 185)

Urdu

(1) اس آرٹیکل کے تابع، عدالت عظمٰی کو کسی عدالت عالیہ کے صادر کردہ فیصلوں، ڈگریوں، حتمی احکام یا سزاؤں کے خلاف اپیلوں کی سماعت کرنے اور ان پر فیصلہ صادر کرنے کا اختیار ہو گا۔
(2) کسی عدالت عالیہ کے صادر کردہ کسی فیصلے، ڈگری، حتمی حکم یا سزا کے خلاف اپیل عدالت عظمٰی میں دائر کی جا سکے گی۔
...
(و) اگر عدالت عالیہ اس امر کی تصدیق کر دے کہ مقدمے میں دستور کی تعبیر کے بارے میں کوئی اہم قانونی مسئلہ درپیش ہے۔
... (آرٹیکل 185)

Education

English

(1) No person attending any educational institution shall be required to receive religious instruction, or take part in any religious ceremony, or attend religious worship, if such instruction, ceremony or worship relates to a religion other than his own.

(3) Subject to law.

(b) no citizen shall be denied admission to any educational institution receiving aid from public revenues on the ground only of race, religion, caste or place of birth.
(4) Nothing in this Article shall prevent any public authority from making provision for the Advancement of any socially or educationally backward class of citizens. (Art. 22)

Urdu

(1) کسی تعلیمی ادارے میں تعلیم پانے والے کسی شخص کو مذہبی تعلیم حاصل کرنے یا کسی مذہبی تقریب میں حصہ لینے یا مذہبی عبادت میں شرکت کرنے پر مجبور نہیں کیا جائے گا، اگر ایسی تعلیم، تقریب یا عبادت کا تعلق اس کے اپنے مذہب کے علاوہ کسی اور مذہب سے ہو۔

(3) قانون کے تابع -
...
(ب) کسی شہری کو محض نسل، مذہب، ذات یا مقام پیدائش کی بنا پر کسی ایسے تعلیمی ادارے میں داخل ہونے سے محروم نہیں کیا جائے گا جسے سرکاری محاصل سے امداد ملتی ہو۔
(4) اس آرٹیکل میں مذکور کوئی امر معاشرتی یا تعلیمی اعتبار سے پسماندہ شہریوں کی ترقی کے لئے کسی سرکاری ہیئت مجاز کی طرف سے اہتمام کرنے میں مانع نہ ہو گا۔ (آرٹیکل 22)

Education

English

The State shall provide free and compulsory education to all children of the age of five to sixteen years in such manner as may be determined by law. (Art. 25A)

Urdu

ریاست پانچ سے سولہ سال تک کی عمر کے تمام بچوں کے لیے مذکورہ طریقہ کار پر جیسا کہ قانون کے ذریعے مقرر کیا جائے مفت اور لازمی تعلیم فراہم کرے گی۔ (آرٹیکل 25 الف)

Education

English

The State shall-
(a) promote, with special care, the educational and economic interests of backward classes or areas;
(b) remove illiteracy and provide free and compulsory secondary education within minimum possible period;
(c) make technical and professional education generally available and higher education equally accessible to all on the basis of merit;
… (Art. 37)

Urdu

مملکت:
(الف) پسماندہ طبقات یا علاقوں کے تعلیمی اور معاشی مفادات کو خصوصی توجہ کے ساتھ فروغ دے گی؛
(ب) کم سے کم ممکنہ مدت کے اندر ناخواندگی کا خاتمہ کرے گی اور مفت اور لازمی ثانوی تعلیم مہیا کرے گی؛
(ج) فنی اور پیشہ وارانہ تعلیم کو عام طور پر ممکن الحصول اور اعلی تعلیم کو لیاقت کی بنیاد پر سب کے لیے مساوی طور پر قابلِ دسترس بنائے گی؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 37)

Employment Rights and Protection

English

The State shall ensure the elimination of all forms of exploitation and the gradual fulfilment of the fundamental principle, from each according to his ability, to each according to his work. (Art. 3)

Urdu

مملکت استحصال کی تمام اقسام کے خاتمہ اور اس بنیادی اصول کی تدریجی تکمیل کو یقینی بنائے گی کہ ہر کسی سے اس کی اہلیت کے مطابق کام لیا جائے گا اور ہر کسی کو اس کے کام کے مطابق معاوضہ دیا جائے۔ (آرٹیکل 3)

Employment Rights and Protection

English

Subject to such qualifications, if any, as may be prescribed by law, every citizen shall have the right to enter upon any lawful profession or occupation, and to conduct any lawful trade or business: … (Art. 18)

Urdu

ایسی شرائط قابلیت کے تابع، اگر کوئی ہوں، جو قانون کے ذریعے مقرر کی جائیں، ہر شہری کو کوئی جائز پیشہ یا مشغلہ اختیار کرنے اور کوئی تجارت یا کاروبار کرنے کا حق ہو گا: ... (آرٹیکل 18)

Employment Rights and Protection

English

The State shall-

(e) make provision for securing just and humane conditions of work, ensuring that children and women are not employed in vocations unsuited to their age or sex, and for maternity benefits for women in employment;
… (Art. 37)

Urdu

مملکت:
...
(ہ) منصفانہ اور نرم شرائط کار، اس امر کی ضمانت دیتے ہوئے کہ بچوں اور عورتوں سے ایسے پیشوں میں کام نہ لیا جائے گا جو ان کی عمر یا جنس کے لئے نامناسب ہوں، مقرر کرنے کے لئے، اور ملازم عورتوں کے لئے زچگی سے متعلق مراعات دینے کے لئے، احکام وضع کرے گی؛
... (آرٹیکل 37)

Employment Rights and Protection

English

The State shall-
(a) secure the well-being of the people, irrespective of sex, caste, creed or race, by raising their standard of living, by preventing the concentration of wealth and means of production and distribution in the hands of a few to the detriment of general interest and by ensuring equitable adjustment of rights between employers and employees, and landlords and tenants;
(b) provide for all citizens, within the available resources of the country, facilities for work and adequate livelihood with reasonable rest and leisure;
(c) provide for all persons employed in the service of Pakistan or otherwise, social security by compulsory social insurance or other means;
… (Art. 38)

Urdu

مملکت -
(الف) عام آدمی کے معیار زندگی کو بلند کر کے، دولت اور وسائل پیداوار و تقسیم کو چند اشخاص کے ہاتھوں میں اس طرح جمع ہونے سے روک کر کہ اس سے مفاد عامہ کو نقصان پہنچے اور آجر و ماجور اور زمیندار اور مزارع کے درمیان حقوق کی منصفانہ تقسیم کی ضمانت دے کر بلالحاظ جنس، ذات، مذہب یا نسل، عوام کی فلاح و بہبود کے حصول کی کوشش کرے گی؛
(ب) تمام شہریوں کے لئے، ملک میں دستیاب وسائل کے اندر، معقول آرام و فرصت کے ساتھ کام اور مناسب روزی کی سہولتیں مہیا کرے گی؛
(ج) پاکستان کی ملازمت میں، یا بصورت دیگر ملازم تمام اشخاص کو لازمی معاشرتی بیمہ کے ذریعے یا کسی اور طرح معاشرتی تحفظ مہیا کرے گی؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 38)

Equality and Non-Discrimination

English

… Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice, as enunciated by Islam, shall be fully observed; …
Wherein shall be guaranteed fundamental rights, including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; …
Inspired by the resolve to protect our national and political unity and solidarity by creating an egalitarian society through a new order; … (Preamble)

Urdu

۔ ۔ ۔ جس میں جمہوریت ، آزادی ، مساوات ، رواداری اور عدل عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے ، پوری طرح عمل کیا جائے گا ؛ ۔ ۔ ۔
جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات ، قانون کی نظر میں برابری ، معاشرتی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہوگی؛ ۔ ۔ ۔
اس عزم بالجزم کے ساتھ کہ ایک نئے نظام کے ذریعے مساوات پر مبنی معاشرہ تخلیق کر کے اپنی قومی اور سیاسی وحدت اور یک جہتی کا تحفظ کریں؛ ۔ ۔ ۔ (تمہید)

Equality and Non-Discrimination

English

To enjoy the protection of law and to be treated in accordance with law is the inalienable right of every citizen, wherever he may be and of every other person for the time being within Pakistan. … (Art. 4)

Urdu

ہر شہری کا خواہ کہیں بھی ہو، اور کسی دوسرے شخص کا جو فی الوقت پاکستان میں ہو، یہ ناقابل انتقال حق ہے کہ اسے قانون کا تحفظ حاصل ہو اور اس کے ساتھ قانون کے مطابق سلوک کیا جائے. ... (آرٹیکل 4)

Equality and Non-Discrimination

English

(1) All citizens are equal before law and are entitled to equal protection of law.
(2) There shall be no discrimination on the basis of sex.
(3) Nothing in this Article shall prevent the State from making any special provision for the protection of women and children. (Art. 25)

Urdu

(1) تمام شہری قانون کی نظر میں برابر ہیں اور قانونی تحفظ کے مساوی طور پر حقدار ہیں۔
(2) محض جنس کی بنا پر کوئی امتیاز نہیں کیا جائے گا۔
(3) اس آرٹیکل میں مذکور کوئی امر عورتوں اور بچوں کے تحفظ کے لئے مملکت کی طرف سے کوئی خاص اہتمام کرنے میں مانع نہ ہو گا۔ (آرٹیکل 25)

Equality and Non-Discrimination

English

(1) In respect of access to places of public entertainment or resort, not intended for religious purposes only, there shall be no discrimination against any citizen on the ground only of race, religion, caste, sex, residence or place of birth.
(2) Nothing in clause (1) shall prevent the State from making any special provision for women and children. (Art. 26)

Urdu

(1) عام تفریح گاہوں یا جمع ہونے کی جگہوں میں جو صرف مذہبی اغراض کے لئے مختص نہ ہوں، آنے جانے کے لئے کسی شہری کے ساتھ محض نسل، مذہب، ذات، جنس، سکونت یا مقام پیدائش کی بناء پر کوئی امتیاز روا نہیں رکھا جائے گا۔
(2) شق نمبر (1) میں مذکورہ کوئی امر عورتوں اور بچوں کے لئے کوئی خاص اہتمام کرنے میں مملکت کے مانع نہیں ہو گا۔ (آرٹیکل 26)

Equality and Non-Discrimination

English

The State shall discourage parochial, racial, tribal sectarian and provincial prejudices among the citizens. (Art. 33)

Urdu

مملکت شہریوں کے درمیان علاقائی، نسلی، قبائلی، فرقہ وارانہ اور صوبائی تعصّبات کی حوصلہ شکنی کرے گی۔ (آرٹیکل 33)

Equality and Non-Discrimination

English

In the Constitution,
(a) words importing the masculine gender shall be taken to include females;
… (Art. 263)

Urdu

اس دستور میں،
(الف) وہ الفاظ جن سے صیغہ مذکر کا مفہوم نکلتا ہو، صیغہ مونث پر بھی حاوی سمجھے جائیں گے؛
... (آرٹیکل 263)

Equality and Non-Discrimination

English

… Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice as enunciated by Islam shall be fully observed; …
Wherein shall be guaranteed fundamental righ ts including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; … (The Objectives Resolution)

Urdu

... جس میں جمہوریت، آزادی، مساوات، رواداری اور عدل... عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے، پوری طرح عمل کیا جائے گا؛
...
جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات، قانون کی نظر میں برابری، معاشرتی، معاشی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہو گی؛ ... (قرارداد مقاصد)

Obligations of the State

English

… Wherein shall be guaranteed fundamental rights, including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; … (Preamble)

Urdu

۔ ۔ ۔ جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات ، قانون کی نظر میں برابری ، معاشرتی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہوگی؛ ۔ ۔ ۔ (تمہید)

Obligations of the State

English

(1) Any law, or any custom or usage having the force of law, in so far as it is inconsistent with the rights conferred by this Chapter,3shall, to the extent of such inconsistency, be void.
(2) The State4 shall not make any law which takes away or abridges the rights so conferred and any law made in contravention of this clause shall, to the extent of such contravention, be void.
… (Art. 8)

Urdu

(1) کوئی قانون، یا رسم یا رواج جو قانون کا حکم رکھتا ہو، تناقض کی اس حد تک کالعدم ہو گا جس حد تک وہ اس باب میں عطاکردہ حقوق کا نقیض ہو۔
(2) مملکت کوئی ایسا قانون وضع نہیں کرے گی جو بایں طور عطاکردہ حقوق کو سلب یا کم کرے اور ہر وہ قانون جو اس شق کی خلاف ورزی میں وضع کیا جائے اس خلاف ورزی کی حد تک کالعدم ہو گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 8)

Obligations of the State

English

… Wherein shall be guaranteed fundamental rights including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality; … (Objectives Resolution)

Urdu

جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان… حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات، قانون کی نظر میں برابری، معاشرتی، معاشی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہو گی؛ ۔۔۔ (قرارداد مقاصد)

Judicial Protection

English

(3) Without prejudice to the provisions of Article 199, the Supreme Court shall, if it considers that a question of public importance with reference to the enforcement of any of the Fundamental Rights conferred by Chapter I of Part II is involved, have the power to make an order of the nature mentioned in the said Article. (Art. 184)

Urdu

(3) آرٹیکل199 کے احکام پر اثرانداز ہوئے بغیر، عدالت عظمی کو، اگر وہ یہ سمجھے کہ حصہ دوم کے باب 1 کے ذریعے تفویض شدہ بنیادی حقوق میں سے کسی حق کے نفاذ کے سلسلے میں عوامی اہمیت کا کوئی سوال درپیش ہے، مذکورہ آرٹیکل میں بیان کردہ نوعیت کا کوئی حکم صادر کرنے کا اختیار ہو گا۔ (آرٹیکل 184)

Judicial Protection

English

(1) Subject to the Constitution, a High Court may, if it is satisfied that no other adequate remedy is provided by law,—
(a) on the application of any aggrieved party, make an order-
(i) directing a person performing, within the territorial jurisdiction of the Court, functions in connection with the affairs of the Federation, a Province or a local authority, to refrain from doing anything he is not permitted by law to do, or to do anything he is required by law to do; or
(ii) declaring that any act done or proceeding taken within the territorial jurisdiction of the Court by a person performing functions in connection with the affairs of the Federation, a Province or a local authority has been done or taken without lawful authority and is of no legal effect;

(c) on the application of any aggrieved person, make an order giving such directions to any person or authority, including any Government exercising any power or performing any function in, or in relation to, any territory within the jurisdiction of that Court as may be appropriate for the enforcement of any of the Fundamental Rights conferred by Chapter 1 of Part II.
(2) Subject to the Constitution, the right to move a High Court for the enforcement of any of the Fundamental Rights conferred by Chapter 1 of Part II shall not be abridged.

(5) In this Article, unless the context otherwise requires,
"person" includes any body politic or corporate, any authority of or under the control of the Federal Government or of a Provincial Government, and any Court or tribunal, other than the Supreme Court, a High Court or a Court or tribunal established under a law relating to the Armed Forces of Pakistan;
… (Art. 199)

Urdu

(1) اگر کسی عدالت عالیہ کو اطمینان ہو کہ قانون میں کسی اور مناسب چارہ جوئی کا انتظام نہیں ہے تو وہ، دستور کے تابع، -
(الف) کسی فریق دادخواہ کی درخواست پر، بذریعہ حکم، -
(اول) اس عدالت کے علاقائی اختیار سماعت میں وفاق، کسی صوبے یا کسی مقامی ہیئت مجاز کے امور کے سلسلے میں فرائض انجام دینے والے کسی شخص کو ہدایت دے سکے گی کہ وہ کوئی ایسا کام کرنے سے اجتناب کرے، جس کے کرنے کی اجازت اسے قانون نہیں دیتا، یا وہ کوئی ایسا کام کرے جو قانون کی رو سے اس پرواجب ہے؛ یا (دوم) یہ اعلان کر سکے گی کہ عدالت کے علاقائی اختیار سماعت میں وفاق، کسی صوبے یا کسی مقامی ہیئت مجاز کے امور کے سلسلہ میں فرائض انجام دینے والے کسی شخص کی طرف سے کیا ہوا کوئی فعل یا کی ہوئی کوئی کاروائی قانونی اختیار کے بغیر کی گئی ہے اور کوئی قانونی اثر نہیں رکھتی ہے؛ 
...
(ج) کسی فریق دادخواہ کی درخواست پر، اس عدالت کے اختیار سماعت کے اندر کسی علاقے میں، یا اس علاقے کے بارے میں، کسی اختیار کو استعمال کرنیوالے کسی شخص یا ہیئت مجاز، بشمول کسی حکومت کو ایسی ہدایات دیتے ہوئے حکم صادر کر سکے گی جو حصہ دوم کے باب 1 میں تفویض کردہ بنیادی حقوق میں سے کسی حق کے نفاذ کے لئے موزوں ہوں۔
(2) دستور کے تابع، حصہ دوم کے باب 1 میں تفویض کردہ بنیادی حقوق میں سے کسی حق کے نفاذ کے لئے کسی عدالت عالیہ سے رجوع کرنے کا حق محدود نہیں کیا جائے گا۔
... 
(5) اس آرٹیکل میں، بجز اس کے کہ سیاق و سباق سے کچھ اور ظاہر ہو، ---
"شخص" میں کوئی ہیئت سیاسی یا ہیئت اجتماعی، وفاقی حکومت یا کسی صوبائی حکومت کی یا اس کے تحت کوئی ہیئت مجاز اور کوئی عدالت یا ٹریبونل شامل ہے، ماسوائے عدالت عظمی یا کسی عدالت عالیہ یا کسی ایسی عدالت یا ٹریبونل کے جو پاکستان کی مسلح افواج سے متعلق کسی قانون کے تحت قائم کیا گیا ہو؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 199)

Indigenous Peoples

English

(1) Subject to the Constitution, the executive authority of the Federation shall extend to the Federally Administered Tribal Areas, and the executive authority of a Province shall extend to the Provincially Administered Tribal Areas therein.
(2) The President may, from time to time, give such directions to the Governor of a Province relating to the whole or any part of a Tribal Area within the Province as he may deem necessary, and the Governor shall, in the exercise of his functions under this Article, comply with such directions.
(3) No act of Majlis-e-Shoora (Parliament) shall apply to any Federally Administered Tribal Area or to any part thereof, unless the President so directs, and no Act of Majlis-e-Shoora (Parliament) or a Provincial Assembly shall apply to a Provincially Administered Tribal Area, or to any part thereof, unless the Governor of the Province in which the Tribal Area is situate, with the approval of the President, so directs; and in giving such a direction with respect to any law, the President or, as the case may be, the Governor, may direct that the law shall, in its application to a Tribal Area, or to a specified part thereof, have effect subject to such exceptions and modifications as may be specified in the direction.
(4) Notwithstanding anything contained in the Constitution, the President may, with respect to any matter within the Legislative competence of Majlis-e-Shoora (Parliament), and the Governor of a Province, with the prior approval of the President, may, with respect to any matter within the Legislative competence of the Provincial Assembly make regulations for the peace and good government of a Provincial Administered Tribal Area or any part thereof, situated in the province.
(5) Notwithstanding anything contained in the Constitution, the President may, with respect to any matter, make regulations for the peace and good government of a Federally Administered Tribal Area or any part thereof.
(6) The President may, at any time, by Order, direct that the whole or any part of a Tribal Area shall cease to be Tribal Area, and such order may contain such incidental and consequential provisions as appear to the President to be necessary and proper:
Provided that before making any Order under this clause, the President shall ascertain, in such manner as he considers appropriate, the views of the people of the Tribal Area concerned, as represented in tribal jirga.
(7) Neither the Supreme Court nor a High Court shall exercise any jurisdiction under the Constitution in relation to a Tribal Area, unless Majlis-e-Shoora (Parliament) by law otherwise provides:
Provided that nothing in this clause shall affect the jurisdiction which the Supreme Court or a High Court exercised in relation to a Tribal Area immediately before the commencing day. (Art. 247)

Urdu

(1) دستور کے تابع، وفاق کا عاملانہ اختیار مرکز کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات پر وسعت پذیر ہو گا، اور کسی صوبے کا عاملانہ اختیار اس میں شامل صوبے کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات پر وسعت پذیر ہو گا۔
(2) صدر، وقتاً فوقتاً، کسی صوبے میں شامل علاقہ جات یا ان کے کسی حصہ سے متعلق اس صوبے کے گورنر کو ایسی ہدایات دے سکے گا جو وہ ضروری خیال کرے، اور گورنر اس آرٹیکل کے تحت اپنے کارہائے منصبی کی انجام دہی میں مذکورہ ہدایات کو تعمیل کرے گا۔
(3) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کا کوئی ایکٹ وفاق کے زیرانتظام کسی قبائلی علاقے یا اس کے کسی حصے پر اطلاق پذیر نہ ہو گا، جب تک کہ صدر اس طرح ہدایات نہ دے، اور مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) یا کسی صوبائی اسمبلی کا کوئی ایکٹ صوبے کے زیرانتاظام کسی قبائلی علاقے یا اس کس کسی حصے پر اطلاق پذیر نہ ہو گا جب تک کہ اس صوبے کا گورنر جس میں وہ قبائلی علاقہ واقع ہو، صدر کی منظوری سے، اس طرح ہدایات نہ دے؛ اور کسی قانون سے متعلق کوئی ایسی ہدایات دیتے وقت، صدر یا، جیسی بھی صورت ہو، گورنر، یہ ہدایات دے سکے گا کہ اس قانون کا اطلاق کسی قبائلی علاقے پر، یا اس کے کسی مصرحہ حصے پر، ایسی مستثنیات اور ترمیمات کے ساتھ ہو گا جس کی صراحت اس ہدایت میں کر دی جائے۔
(4) دستور میں شامل کسی امر کے باوجود، صدر، مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کے اختیارات قانون سازی کے اندر کسی معاملے سے متعلق، اور کسی صوبے کا گورنر، صدر کی ماقبل منظوری سے، صوبائی اسمبلی کے اختیارات قانون سازی کے اندر کسی معاملے سے متعلق، صوبے کے زیرانتظام کسی قبائلی علاقے یا اس کے کسی ایسے حصے کے لئے جو اس صوبے میں واقع ہو، امن و امان اور بہتر نظم و نسق کے لئے ضوابط وضع کر سکے گا۔
(5) دستورمیں شامل کسی امر کے باوجود، صدر کسی معاملے سے متعلق، وفاق کر زیرانتظام کسی قبائلی علاقہ یا اس کے کسی حصہ کے امن و امان اور بہتر نظم و نسق کے لئے ضوابط وضع کر سکے گا۔
(6) صدر، کسی وقت بھی، فرمان کے ذریعے، ہدایت دے سکے گا کہ قبائلی علاقے کا تمام یا کوئی حصہ قبائلی علاقہ نہیں رہے گا، اور مذکورہ فرمان میں ایسے ضمنی اور ذیلی احکام شامل ہو سکیں کے جو صدر کو ضروری اور مناسب معلوم ہوں:
مگر شرط یہ ہے کہ اس شق میں کوئی امر اس اختیار سماعت پر اثر انداز نہ ہو گا جو عدالت عظمی یا کوئی عدالت عالیہ کسی قبائلی علاقہ سے متعلق یوم آغاز سے عین قبل استعمال کرتی تھی۔
(7) کسی قبائلی علاقے سے متعلق دستور کے تحت نہ عدالت عظمی اور نہ کوئی عدالت عالیہ اپنا اختیار سماعت استمعال کرے گی تاوقتیکہ مجلس شورٰی (پارلیمنٹ) بذریعہ قانون بصورت دیگر حکم نہ دے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس شق میں کوئی امر اس اختیار سماعت پر اثرانداز نہ ہو گا جو عدالت عظمی یا کوئی عدالت عالیہ کسی قبائلی علاقہ سے متعلق یوم آغاز سے عین قبل استعمال کرتی تھی۔
(آرٹیکل 247)

Limitations and/or Derogations

English

(2) The State shall not make any law which takes away or abridges the rights so conferred and any law made in contravention of this clause shall, to the extent of such contravention, be void.

(5) The rights conferred by this Chapter5 shall not be suspended except as expressly provided by the Constitution. (Art. 8)

Urdu

(2) مملکت کوئی ایسا قانون وضع نہیں کرے گی جو بایں طور عطاکردہ حقوق کو سلب یا کم کرے اور ہر وہ قانون جو اس شق کی خلاف ورزی میں وضع کیا جائے اس خلاف ورزی کی حد تک کالعدم ہو گا۔
۔ ۔ ۔
(5) اس باب کی رو سے عطاکردہ حقوق معطل نہیں کئے جائیں گے بجز جس طرح کہ دستور میں بالصراحت قرار دیا گیا ہے۔ (آرٹیکل 8)

Limitations and/or Derogations

English

(1) Nothing contained in Articles 15, 16, 17, 18, 19, and 24 shall, while a proclamation of Emergency is in force, restrict the power of the State as defined in Article 7 to make any law or take any executive action which it would, but for the provisions in the said Articles, be competent to make or to take, but any law so made shall, to the extent of the incompetency, cease to have effect, and shall be deemed to have been repealed, at the time when the Proclamation is revoked or has ceased to be in force.
(2) While a Proclamation of Emergency is in force, the President may, by Order, declare that the right to move any Court for the enforcement of such of the Fundamental Rights conferred by Chapter I of Part II as may be specified in the Order, and any proceeding in any Court which is for the enforcement, or involves the determination of any question as to the infringement, of any of the Rights so specified, shall remain suspended for the period during which the Proclamation is in force, and any such Order may be made in respect of the whole or any part of Pakistan.
… (Art. 233)

Urdu

(1) آرٹیکل 15، 16، 17، 18، 19 اور 24 میں شامل کوئی امر، جبکہ ہنگامی حالت کا اعلان نافذالعمل ہو، مملکت کے، جیسا کہ آرٹیکل 7 میں تعریف کی گئی ہے، کوئی قانون وضع کرنے یا کوئی عاملانہ قدم اٹھانے کے اختیار پر، جس کے کرنے یا اٹھانے کی وہ مجاز ہوتی اگر مذکورہ آرٹیکل میں شامل احکام نہ ہوتے، پابندی عائد نہیں کرے گا، مگر اس طرح وضع شدہ کوئی قانون، اس وقت جبکہ مذکورہ اعلان منسوخ کر دیا جائے یا نافذالعمل نہ رہے، اس عدم اہلیت کی حد تک غیر مؤثر ہو جائے گا اور منسوخ شدہ تصور ہو گا۔
(2) جس دوران ہنگامی حالت کا اعلان نافذالعمل ہو، صدر بذریعہ فرمان یہ اعلان کر سکے گا کہ حصہ دوم کے باب اول کی رو سے عطاکردہ بنیادی حقوق میں سے ان کے نفاذ کے لئے جن کی فرمان میں صراحت کر دی جائے کسی عدالت سے رجوع کرنے کا حق اور کسی عدالت میں کوئی کاروائی جو اس طرح مصرحہ حقوق میں سے کسی کے نفاذ کے لئے ہو یا جس میں اس حقوق میں سے کسی کی خلاف ورزی کے متعلق کسی سوال کا تعین مطلوب ہو، اس مدت کے لئے معطل رہے گی جس کے دوران اعلان نافذالعمل رہے اور ایسا کوئی فرمان پورے پاکستان یا اس کے کسی حصہ کے بارے میں صادر کیا جا سکے گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 233)

Marriage and Family Life

English

The state shall protect the marriage, the family, the mother and the child. (Art. 35)

Urdu

مملکت، شادی، خاندان ماں اور بچے کی حفاظت کرے گی۔ (آرٹیکل 35)

Marriage and Family Life

English

The State shall-

(e) make provision for securing just and humane conditions of work, ensuring that children and women are not employed in vocations unsuited to their age or sex, and for maternity benefits for women in employment;
… (Art. 37)

Urdu

مملکت:
...
(ہ) منصفانہ اور نرم شرائط کار، اس امر کی ضمانت دیتے ہوئے کہ بچوں اور عورتوں سے ایسے پیشوں میں کام نہ لیا جائے گا جو ان کی عمر یا جنس کے لئے نامناسب ہوں، مقرر کرنے کے لئے، اور ملازم عورتوں کے لئے زچگی سے متعلق مراعات دینے کے لئے، احکام وضع کرے گی؛
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 37)

Minorities

English

… Wherein the Muslims shall be enabled to order their lives in the individual and collective spheres in accordance with the teachings and requirements of Islam as set out in the Holy Quran and Sunnah;
Wherein adequate provision shall be made for the minorities freely to profess and practise their religions and develop their cultures; …
Wherein shall be guaranteed fundamental rights, including equality of status, of opportunity and before law, social, economic and political justice, and freedom of thought, expression, belief, faith, worship and association, subject to law and public morality;
Wherein adequate provision shall be made to safeguard the legitimate interests of minorities and backward and depressed classes; … (Preamble)

Urdu

... جس میں مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی حلقہ ہائے عمل میں اس قابل بنایا جائے گا کہ وہ اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات و مقتضیات کے مطابق، جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، ترتیب دے سکیں؛ جس میں قرار واقعی انتظام کیا جائے گا کہ اقلیتیں آزادی سے اپنے مذاہب پر عقیدہ رکھ سکیں اور ان پر عمل کر سکیں اور اپنی ثقافتوں کو ترقی دے سکیں؛ ...
 جس میں بنیادی حقوق کی ضمانت دی جائے گی اور ان حقوق میں قانون اور اخلاق عامہ کے تابع حیثیت اور مواقع میں مساوات، قانون کی نظر میں برابری، معاشرتی اور سیاسی انصاف اور خیال، اظہار خیال، عقیدہ، دین، عبادت اور اجتماع کی آزادی شامل ہوگی؛
جس میں اقلیتوں اور پسماندہ طبقوں کے جائز مفادات کے تحفظ کا قرار واقعی انتظام کیا جائے گا؛ ... (تمہید)

Minorities

English

The State shall safeguard the legitimate rights and interests of minorities, including their due representation in the Federal and Provincial services. (Art. 36)

Urdu

مملکت ، اقلیتوں کے جائز حقوق اور مفادات کا ، جن میں وفاقی اور صوبائی ملازمتوں میں ان کی مناسب نمائندگی شامل ہے ، تحفظ کرے گی۔ (آرٹیکل 36)

Minorities

English

… Wherein adequate provision shall be made for the minorities to freely profess and practise their religions and develop their cultures; …
Wherein adequate provision shall be made to safeguard the legitimate interests of minorities and backward and depressed classes; … (Objectives Resolution)

Urdu

... جس میں قرار واقعی انظام کیا جائے گا کہ اقلیتیں آزادی سے اپنے مذہب پر عقیدہ رکھ سکیں اور ان پر عمل کر سکیں اور اپنی ثقافتوں کو ترقی دے سکیں؛ ... 
جس میں اقلیتوں اور پسماندہ طبقوں کے جائز مفادات کے تحفظ کا قرارواقعی انتظام کیا جائے گا؛ ... (قرارداد مقاصد)

Participation in Public Life and Institutions

English

(1) No citizen otherwise qualified for appointment in the service of Pakistan shall be discriminated against in respect of any such appointment on the ground only of race, religion, caste, sex, residence or place of birth:
Provided that, for a period not exceeding forty years from the commencing day, posts may be reserved for persons belonging to any class or area to secure their adequate representation in the service of Pakistan:
Provided further that, in the interest of the said service, specified posts or services may be reserved for members of either sex if such posts or services entail the performance of duties and functions which cannot be adequately performed by members of the other sex:
Provided also that under-representation of any class or area in the service of Pakistan may be redressed in such manner as may be determined by an Act of Majlis-e-Shoora (Parliament).
… (Art. 27)

Urdu

(1) کسی شہری کے ساتھ جو بہ اعتبار دیگر پاکستان کی ملازمت میں تقرر کا اہل ہو، کسی ایسے تقرر کے سلسلے میں محض نسل، مذہب، ذات، جنس، سکونت یا مقام پیدائش کی بنا پر امتیاز روا نہیں رکھا جائے گا۔
مگر شرط یہ ہے کہ یوم آغاز سے زیادہ سے زیادہ چالیس سال کی مدت تک کسی طبقے یا علاقے کے لوگوں کے لیے آسامیاں محفوظ کی جا سکیں گی تا کہ پاکستان کی ملازمت میں ان کو مناسب نمائندگی حاصل ہو جائے:
مزید شرط یہ ہے کہ مذکورہ ملازمت کے مفاد میں مصرحہ آسامیاں یا ملازمتیں کسی ایک جنس کے افراد کے لیے محفوظ کی جا سکیں گی اگر مذکورہ آسامیوں یا ملازمتوں میں ایسے فرائض اور کارہائے منصبی کی انجام دہی ضروری ہوجو دوسری جنس کے افراد کی جانب سے مناسب طور پر انجام نہ دئیے جا سکتے ہوں:
مگر شرط یہ بھی ہے کہ پاکستان کی ملازمت میں کسی بھی طبقے یا علاقے کی کم نمائندگی کی مذکورہ طریقہ کار پر تلافی کی جائے گی جیسا مجلسِ شوریٰ (پارلیمنٹ) کے ایکٹ کے ذریعے تعین کرے۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 27)

Participation in Public Life and Institutions

English

Steps shall be taken to ensure full participation of women in all spheres of national life. (Art. 34)

Urdu

قومی زندگی کے تمام شعبوں میں عورتوں کی مکمل شمولیت کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے۔ (آرٹیکل 34)

Participation in Public Life and Institutions

English

The State shall-

(f) enable the people of different areas, through education, training, agricultural and industrial development and other methods, to participate fully in all forms of national activities, including employment in the service of Pakistan;
… (Art. 37)

Urdu

مملکت:
...
(و) مختلف علاقوں کے افراد کو، تعلیم، تربیت، زرعی اور صنعتی ترقی اور دیگر طریقوں سے اس قابل بنائے گی کہ وہ ہر قسم کی قومی سرگرمیوں میں، جن میں ملازمت پاکستان میں خدمت بھی شامل ہے، پورا پورا حصہ لے سکیں؛
... (آرٹیکل 37)

Political Rights and Association

English

(1) Every citizen shall have the right to form associations or unions, subject to any reasonable restrictions imposed by law in the interest of sovereignty or integrity of Pakistan, public order or morality.
(2) Every citizen, not being in the service of Pakistan, shall have the right to form or be a member of a political party, subject to any reasonable restrictions imposed by law in the interest of the sovereignty or integrity of Pakistan and such law shall provide that where the Federal Government declares that any political party has been formed or is operating in a manner prejudicial to the sovereignty or integrity of Pakistan, the Federal Government shall, within fifteen days of such declaration, refer the matter to the Supreme Court whose decision on such reference shall be final.
… (Art. 17)

Urdu

(1) پاکستان کی حاکمیتِ اعلی یا سالمیت، امنِ عامہ یا اخلاق کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع، ہر شہری کو انجمنیں یا یونینیں بنانے کا حق حاصل ہو گا۔
(2) ہر شہری کو، جو ملازمتِ پاکستان میں نہ ہو، پاکستان کی حاکمیت اعلی یا سالمیت کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع کوئی سیاسی جماعت بنانے یا اس کا رکن بننے کا حق ہوگا اور مذکورہ قانون میں قرار دیا جائے گا کہ جب کہ وفاقی حکومت یہ اعلان کر دے کہ کوئی سیاسی جماعت ایسے طریقے پر بنائی گئی ہے یا عمل کر رہی ہے جو پاکستان کی حاکمیتِ اعلی یا سالمیت کے لیے مضر ہے تو وفاقی حکومت مذکورہ اعلان سے پندرہ دن کے اندر معاملہ عدالتِ عظمٰی کے حوالے کر دے گی جس کا مذکورہ حوالے پر فیصلہ قطعی ہوگا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 17)

Political Rights and Association

English

(2) A person shall be entitled to vote if­—
(a) he is a citizen of Pakistan;
(b) he is not less than eighteen years of age;
(c) his name appears on the electoral roll; and
(d) he is not declared by a competent court to be of unsound mind.
… (Art. 51)

Urdu

(2) کوئی شخص ووٹ دینے کا حقدار ہو گا اگر-
(الف) وہ پاکستان کا شہری ہو؛
(ب) اس کی عمر اٹھارہ سال سے کم نہ ہو؛
(ج) اس کا نام انتخابی فہرست میں موجود ہو؛ اور
(د) اسے کسی با اختیار عدالت نے فاتر العقل قرار نہ دیا ہو۔
... (آرٹیکل 51)

National level

English

(1) There shall be three hundred and forty-two seats for members in the National Assembly, including seats reserved for women and non-Muslims.6

(4) In addition to the number of seats referred to in clause (3), there shall be, in the National Assembly, ten seats reserved for non-Muslims.
(5) The seats in the National Assembly shall be allocated to each Province, the Federally Administered Tribal Areas and the Federal Capital on the basis of population in accordance with the last preceding census officially published.
(6) For the purpose of election to the National Assembly,—­
(a) the constituencies for the general seats shall be single member territorial constituencies and the members to fill such seats shall be elected by direct and free vote in accordance with law;
(b) each Province shall be a single constituency for all seats reserved for women which are allocated to the respective Provinces under clause (3);
(c) the constituency for all seats reserved for non-Muslims shall be the whole country;
(d) members to the seats reserved for women which are allocated to a Province under clause (3) shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats secured by each political party from the Province concerned in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates; and
(e) members to the seats reserved for non-Muslims shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats won by each political party in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates. (Art. 51)

Urdu

(1) قومی اسمبلی میں خواتین اور غیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں کے بشمول ارکان کی تین سو بیالیس نشستیں ہوں گی۔

(4) شق (3) میں محولہ نشستوں کی تعداد کے علاوہ، قومی اسمبلی میں، غیر مسلموں کے لئے دس نشستیں مخصوص کی جائیں گی۔
(5) قومی اسمبلی میں نشستیں سرکاری طور پر شائع شدہ گزشتہ آخری مردم شماری کے مطابق آبادی کی بنیاد پر ہر صوبے، وفاق کے زیرِ انتظام قبائلی علاقہ جات اور وفاقی دارالحکومت کے لئے متعین کی جائیں گی۔
(6) قومی اسمبلی کے لئے انتخاب کی غرض سے، -
(الف) عام نشستوں کے لئے انتخابی حلقے ایک رکنی علاقائی حلقے ہوں گے اور مذکورہ نشستوں کو پُر کرنے کے لئے ارکان بلاواسطہ اور آزادانہ ووٹ کے ذریعے قانون کے مطابق منتخب کئے جائیں گے؛
(ب) ہر ایک صوبہ خواتیں کے لئے مخصوص تمام نشستوں کے لئے جو متعلقہ صوبوں کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں واحد حلقہ انتخاب ہو گا؛
(ج) غیر مسلموں کے لئے مخصوص تمام نشستوں کے لئے حلقۂ انتخاب پورا ملک ہو گا؛
(د) خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے جو کسی صوبے کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعے قومی اسمبلی میں متعلقہ صوبہ سے ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں؛ اور
(ہ) غیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعے قومی اسمبلی میں ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں۔ (آرٹیکل 51)

National level

English

(1) The Senate shall consist of one-hundred and four members, of whom,
(a) fourteen shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(b) eight shall be elected from the Federally Administered Tribal Areas, in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(c) two on general seats, and one woman and one technocrat including aalim shall be elected from the Federal Capital in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(d) four women shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(e) four technocrats including ulema shall be elected by the members of each Provincial Assembly; and
(f) four non-Muslims, one from each Province, shall be elected by the members of each Provincial Assembly:
Provided that paragraph (f) shall be effective from the next Senate election after the commencement of the Constitution (Eighteenth Amendment) Act, 2010.
(2) Election to fill seats in the Senate allocated to each Province shall be held in accordance with the system of proportional representation by means of the single transferable vote.
(3) The Senate shall not be subject to dissolution but the term of its members, who shall retire as follows, shall be six years :­
(a) of the members referred to in paragraph (a) of clause (1), seven shall retire after the expiration of the first three years and seven shall retire after the expiration of the next three years;
(b) of the members referred to in paragraph (b) of the aforesaid clause, four shall retire after the expiration of the first three years and four shall retire after the expiration of the next three years;
(c) of the members referred to in paragraph (c) of the aforesaid clause,­—
(i) one elected on general seat shall retire after the expiration of the first three years and the other one shall retire after the expiration of the next three years; and
(ii) one elected on the seat reserved for technocrat shall retire after first three years and the one elected on the seat reserved for women shall retire after the expiration of the next three years;
(d) of the members referred to in paragraph (d) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the first three years and two shall retire after the expiration of the next three years;
(e) of the members referred to in paragraph (e) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the. first three years and two shall retire after the expiration of the next three years; and
(f) of the members referred to in paragraph (f) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of first three years and two shall retire after the expiration of next three years:
Provided that the Election Commission for the first term of seats for non-Muslims shall draw a lot as to which two members shall retire after the first three years. … (Art. 59)

Urdu

(1) سینٹ ایک سو ارکان پر مشتمل ہو گی جن میں سے -  
(الف) چودہ ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ب) آٹھ وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقوں سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(ج) دو عام نشستوں پر اور ایک خاتون اور ایک ٹیکنوکریٹ بشمول عالم وفاقی دارالحکومت سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(د) چار خواتین ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ہ) چار ٹیکنوکریٹ بشمول علماء ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے۔
(و) چار غیر مسلم، ہر صوبے سے ایک، ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ پیراگراف (و) دستور (اٹھارویں ترمیم) ایکٹ 2010 کے نفاذ کے بعد سینٹ کے اگلے الیکشن سے مؤثر ہو گا۔
(2) سینٹ میں ہر صوبے کے لئے متعین نشستوں کو پُر کرنے کے لئے انتخاب، واحد قابل انتقال ووٹ کے ذریعے متناسب نمائندگی کے نظام کے مطابق کیا جائے گا۔
(3) سینٹ ٹوٹنے کے تابع نہیں ہو گی لیکن اس کے ارکان کی معیاد، جو بحسب ذیل سبکدوش ہوں گے، چھ سال ہو گی:- (الف) شق (1) کے پیرا (الف) کے محولہ ارکان میں سے، سات پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ (ب) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ب) میں محولہ ارکان میں سے چار پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور چار اگلے تیس سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛
(ج) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ج) میں محولہ ارکان میں سے، ---
(اول) عام نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور دوسرا اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛
(دوم) ٹیکنوکریٹ کی نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور خواتین کے لئے مخصوص نشست پر منتخب ہونے والا ایک اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛ (د) مذکورہ بالا شق کے پیرا (د) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ اور
(ہ) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ہ) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی پہلی مدت کی نشستوں کے لئے قرعہ ڈالا جائے گا کہ کون سے دو ارکان پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے۔
(و) مذکورہ بالا شق کے پیرا (و) میں محولہ ارکان میں سے دو پہلے تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے سال تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی نشستوں کی پہلی میعاد کے لیے قرعہ اندازی کرے گا کہ کون سا رکن پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائے گا۔ ...  (آرٹیکل 59)

National level

English

(6) When a seat reserved for women or non-Muslims in the National Assembly or a Provincial Assembly falls vacant, on account of death, resignation or disqualification of a member, it shall be filled by the next person in order of precedence from the party list of the candidates to be submitted to the Election Commission by the political party whose member has vacated such seat.
Provided that if at any time the party list is exhausted, the concerned political party may submit a name for any vacancy which may occur thereafter. (Art. 224)

Urdu

(6) جب قومی اسمبلی یا کسی صوبائی اسمبلی میں خواتین یا غیر مسلموں کے لئے کوئی مخصوص نشست کسی رکن کی موت، استعفی یا نا اہلیت کی وجہ سے خالی ہوجائے، تو اسے اس سیاسی جماعت کی طرف سے جس کے رکن نے مذکورہ شست خالی کی ہو آخری عام انتخاب کے لئے الیکشن کمیشن کو پیش کردہ امیدواروں کی جماعتی فہرست میں بلحاظ تقدم اگلے شخص کے ذریعہ پُر کیا جائے گا۔
مگر شرط یہ ہے کہ اگر کسی بھی وقت پر جماعتی فہرست ختم ہو جائے تو متعلقہ سیاسی جماعت بعد ازاں ہونے والی کسی آسامی کے لئے مزید نام پیش کر سکتی ہے۔ (آرٹیکل 224)

Subnational levels

English

(l) Each Provincial Assembly shall consist of general seats and seats reserved for women and non-Muslims as specified herein7  ...   
(3) For the purpose of election to a Provincial Assembly,­—
(a) the constituencies for the general seats shall be single member territorial constituencies and the members to fill such seats shall be elected by direct and free vote;
(b) each Province shall be a single constituency for all seats reserved for women and non-­Muslims allocated to the respective Provinces under clause (1);
(c) the members to fill seats reserved for women and non-Muslims allocated to a Province under clause (1) shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of the total number of general seats secured by each political party in the Provincial Assembly:
Provided that for the purpose of this sub-clause, the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates. (Art. 106)

Urdu

(1) ہرصوبائی اسمبلی عام نشستوں اورخواتین اورغیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں پر مشتمل ہوگی جس طرح کہ ذیل میں صراحت کی گئی ہے- ...
(3) کسی صوبائی اسمبلی کے انتخاب کی غرض سے، -
(الف) عام نشستوں کے لئے انتخابی حلقے ایک رکنی علاقائی حلقے ہوں گے اور مذکورہ نشستوں کو پُر کرنے کے لئے ارکان بلاواسطہ آزادانہ ووٹ کے ذریعے منتخب کئے جائیں گے؛
(ب) شق (1) کے تحت متعلقہ صوبوں کے لئے تعین کردہ خواتین اورغیرمسلموں کے لئےمخصوص تمام نشستوں کے لئے ہرایک صوبہ واحد انتخابی حلقہ ہو گا؛
(ج) شق(1) کے تحت کسی صوبہ کے لئے تعین کردہ خواتین اورغیرمسلموں کے لئےمخصوص نشستوں کو پُر کرنے کے لئے ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کے امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعہ صوبائی اسمبلی میں ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پرمنتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے نام کی اشاعت کے تین یوم کے اندر با ضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہوجائیں؛ (آرٹیکل 106)

Subnational levels

English

(6) When a seat reserved for women or non-Muslims in the National Assembly or a Provincial Assembly falls vacant, on account of death, resignation or disqualification of a member, it shall be filled by the next person in order of precedence from the party list of the candidates to be submitted to the Election Commission by the political party whose member has vacated such seat.
Provided that if at any time the party list is exhausted, the concerned political party may submit a name for any vacancy which may occur thereafter. (Art. 224)

Urdu

(6) جب قومی اسمبلی یا کسی صوبائی اسمبلی میں خواتین یا غیر مسلموں کے لئے کوئی مخصوص نشست کسی رکن کی موت، استعفی یا نا اہلیت کی وجہ سے خالی ہوجائے، تو اسے اس سیاسی جماعت کی طرف سے جس کے رکن نے مذکورہ شست خالی کی ہو آخری عام انتخاب کے لئے الیکشن کمیشن کو پیش کردہ امیدواروں کی جماعتی فہرست میں بلحاظ تقدم اگلے شخص کے ذریعہ پُر کیا جائے گا۔
مگر شرط یہ ہے کہ اگر کسی بھی وقت پر جماعتی فہرست ختم ہو جائے تو متعلقہ سیاسی جماعت بعد ازاں ہونے والی کسی آسامی کے لئے مزید نام پیش کر سکتی ہے۔ (آرٹیکل 224)

Political Parties

English

(2) Every citizen, not being in the service of Pakistan, shall have the right to form or be a member of a political party, subject to any reasonable restrictions imposed by law in the interest of the sovereignty or integrity of Pakistan and such law shall provide that where the Federal Government declares that any political party has been formed or is operating in a manner prejudicial to the sovereignty or integrity of Pakistan, the Federal Government shall, within fifteen days of such declaration, refer the matter to the Supreme Court whose decision on such reference shall be final.
(3) Every political party shall account for the source of its funds in accordance with law. (Art. 17)

Urdu

(2) ہر شہری کو، جو ملازمتِ پاکستان میں نہ ہو، پاکستان کی حاکمیت اعلی یا سالمیت کے مفاد میں قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع کوئی سیاسی جماعت بنانے یا اس کا رکن بننے کا حق ہوگا اور مذکورہ قانون میں قرار دیا جائے گا کہ جب کہ وفاقی حکومت یہ اعلان کر دے کہ کوئی سیاسی جماعت ایسے طریقے پر بنائی گئی ہے یا عمل کر رہی ہے جو پاکستان کی حاکمیتِ اعلی یا سالمیت کے لیے مضر ہے تو وفاقی حکومت مذکورہ اعلان سے پندرہ دن کے اندر معاملہ عدالتِ عظمٰی کے حوالے کر دے گی جس کا مذکورہ حوالے پر فیصلہ قطعی ہو گا۔
(3) ہر سیاسی جماعت قانون کے مطابق اپنے مالی ذرائع کے ماخذ کے لیے جواب دہ ہو گی۔ (آرٹیکل 17)

Electoral Bodies

English

(1) For the purpose of election to both Houses of Majlis-e-Shoora (Parliament), Provincial Assemblies and for election to such other public offices as may be specified by law, a permanent Election Commission shall be constituted in accordance with this Article.
(2) The Election Commission shall consist of,—
(a) the Commissioner who shall be the Chairman of the Commission; and
(b) four members, each of whom has been a Judge of a High Court from each Province, appointed by the President in the manner provided for appointment of the Commissioner in clauses (2A) and (2B) of Article 213.
(3) It shall be the duty of the Election Commission to organize and conduct the election and to make such arrangements as are necessary to ensure that the election is conducted honestly, justly, fairly and in accordance with law, and that corrupt practices are guarded against. (Art. 218)

Urdu

(1) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کے دونوں ایوانوں، صوبائی اسمبلیوں کے انتخاب کی غرض کے لئے اور ایسے دیگر عوامی عہدوں کے انتخاب کے لئے جس طرح کہ قانون کے ذریعہ یا جب تک مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کی طرف سے ایسا قانون وضع نہ کر لیا جائے صدر کے فرمان کی رو سے صراحت کر دی جائے، اس آرٹیکل کے مطابق الیکشن کمیشن تشکیل دیا جائے گا۔
(2) الیکشن کمیشن حسب ذیل پر مشتمل ہو گا -
(الف) کمشنر جو کمیشن کا چیئرمین ہو گا؛ اور
(ب) چار ارکان پر، جن میں سے ہر ایک (ہر ایک صوبے سے) عدالت عالیہ کا جج ہو گا جسے صدر متعلقہ عدالت عالیہ کے چیف جسٹس اور کمشنر سے مشورے کے بعد مقرر کرے گا۔
(3) کسی انتخاب کے سلسے میں تشکیل کردہ الیکشن کمیشن کا یہ فرض ہو گا کہ وہ انتخاب کا انتظام کرے اور اسے منعقد کرائے اور ایسے انتظامات کرے جو اس امر کے اطمینان کے لئے ضروری ہوں کہ انتخاب ایمانداری، حق اور انصاف کے ساتھ اور قانون کے مطابق منعقد ہو اور یہ کہ بدعنوانیوں کا سدباب ہو سکے۔ (آرٹیکل 218)

Head of State

English

(1) There shall be a President of Pakistan who shall be the Head of State and shall represent the unity of the Republic.
(2) A person shall not be qualified for election as President unless he is a Muslim of not less than forty-five years of age and is qualified to be elected as member of the National Assembly.
(3) The President shall be elected in accordance with the provisions of the Second Schedule by the members of an electoral college consisting of—
(a) the members of both Houses; and
(b) the members of the Provincial Assemblies.
… (Art. 41)

Urdu

(1) پاکستان کا ایک صدر ہو گا جو مملکت کا سربراہ ہو گا اور جمہوریہ کے اتحاد کی نمائندگی کرے گا۔
(2) کوئی شخص اس وقت تک صدر کی حیثیت سے انتـخاب کا اہل نہیں ہو گا تاوقتیکہ وہ کم از کم پینتالیس سال کی عمر کا مسلمان نہ ہو اور قومی اسمبلی کا رکن منتخب ہونے کا اہل نہ ہو۔
(3) منتخب کیا جانے والا صدر جدول دوم کے احکام کے مطابق ذیل پر مشتمل انتخابی ادارے کے ارکان کی طرف سے منتخب کیا جائے گا -
(الف) دونوں ایوانوں کے ارکان؛ اور۔
(ب) صوبائی اسمبلیوں کے ارکان۔
... (آرٹیکل 41)

Government

English

(1) Subject to the Constitution, the executive authority of the Federation shall be exercised in the name of the President by the Federal Government, consisting of the Prime Minister and the Federal Ministers, which shall act through the Prime Minister, who shall be the chief executive of the Federation.
… (Art. 90)

Urdu

(1) دستور کے مطابق، وفاقی حکومت کی جانب سے وفاق کا عاملانہ اختیار صدر کے نام سے استعمال کیا جائے گا، جو وزیراعظم اور وفاقی وزراء پر مشتمل ہو گا، جو وزیراعظم کے ذریعے کام کریں گے جو کہ وفاق کا چیف ایگزیکٹیو ہو گا؛
... (آرٹیکل 90)

Government

English

(1) There shall be a Cabinet of Ministers, with the Prime Minister at its head, to aid and advise the President in the exercise of his functions.

(4) The Prime Minister shall be elected by the votes of the majority of the total membership of the National Assembly: … (Art. 91)

Urdu

(1) صدر کو اس کے کارہائے منصبی کی انجام دہی میں مدد اور مشورہ دینے کے لئے وزراء کی ایک کابینہ ہو گی جس کا سربراہ وزیراعظم ہو گا۔

(4) وزیراعظم قومی اسمبلی کے کل اراکین کی تعداد کی اکثریت رائے دہی کے ذریعے نامزد کیا جائے گا: ... (آرٹیکل 91)

Government

English

(1) Subject to clauses (9) and (10) of Article 91, the President shall appoint Federal Ministers and Ministers of State from amongst the members of Majlis-e-Shoora (Parliament) on the advice of the Prime Minister: … (Art. 92)

Urdu

(1) آرٹیکل 91 کی شقات [(9) اور (10)] کے تابع، صدر، وزیراعظم کے مشورے پر مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کے ارکان میں سے وفاقی وزراء اور وزرائے ممکلت کا تقرر کرے گا: ... (آرٹیکل 92)

Legislature

English

There shall be a Majlis-e-Shoora (Parliament) of Pakistan consisting of the President and two Houses to be known respectively as the National Assembly and the Senate. (Art. 50)

Urdu

پاکستان کی ایک مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) ہو گی جو صدر اور دو ایوانوں پر مشتمل ہو گی جو بالترتیب قومی اسمبلی اور سینٹ کے نام سے موسوم ہوں گے۔ (آرٹیکل 50)

Legislature

English

(1) There shall be three hundred and forty-two seats for members in the National Assembly, including seats reserved for women and non-Muslims.8

(4) In addition to the number of seats referred to in clause (3), there shall be, in the National Assembly, ten seats reserved for non-Muslims.
(5) The seats in the National Assembly shall be allocated to each Province, the Federally Administered Tribal Areas and the Federal Capital on the basis of population in accordance with the last preceding census officially published.
(6) For the purpose of election to the National Assembly,—­
(a) the constituencies for the general seats shall be single member territorial constituencies and the members to fill such seats shall be elected by direct and free vote in accordance with law;
(b) each Province shall be a single constituency for all seats reserved for women which are allocated to the respective Provinces under clause (3);
(c) the constituency for all seats reserved for non-Muslims shall be the whole country;
(d) members to the seats reserved for women which are allocated to a Province under clause (3) shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats secured by each political party from the Province concerned in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates; and
(e) members to the seats reserved for non-Muslims shall be elected in accordance with law through proportional representation system of political parties’ lists of candidates on the basis of total number of general seats won by each political party in the National Assembly:
Provided that for the purpose of this paragraph the total number of general seats won by a political party shall include the independent returned candidate or candidates who may duly join such political party within three days of the publication in the official Gazette of the names of the returned candidates. (Art. 51)

Urdu

(1) قومی اسمبلی میں خواتین اورغیر مسلموں کے لئے مخصوص نششتوں کے بشمول ارکان کی تین سو بیالیس نششتیں ہونگی۔

(4) شق (3) میں محولہ نشستوں کی تعداد کے علاوہ، قومی اسمبلی میں، غیر مسلموں کے لئے دس نشستیں مخصوص کی جائیں گی۔
(5) قومی اسبلی میں نشستیں سرکاری طور پرشائع شدہ گزشتہ آخری مردم شماری کے مطابق آبادی کی بنیاد پر ہر صوبے، وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات اور وفاقی درالحکومت کے لئے متعین کی جائیں گی،-
(6) قومی اسمبلی کے لئے انتخاب کی غرض سے، -
(الف) عام نشستوں کے لئے انتخابی حلقے ایک رکنی علاقائی حلقے ہوں گے اور مذکورہ نشستوں کر پر کرنے کے لئے ارکان بلاواسطہ اور آزادانہ ووٹ کے ذریعے قانون کے مطابق منتخب کئے جائیں گے؛
(ب) ہر ایک صوبہ خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے جو متعلقہ صوبوں کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں واحد حلقۂ انتخاب ہو گا؛
(ج) خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے حلقۂ انتخاب پورا ملک ہو گا؛
(د) خواتین کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے جو کسی صوبے کے لئے شق (3) کے تحت مختص کی گئی ہیں ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام ک ذریعے قومی اسمبلی میں متعلقہ صوبہ سے ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل شدہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں؛ اور
(ہ) غیر مسلموں کے لئے مخصوص نشستوں کے لئے ارکان قانون کے مطابق سیاسی جماعتوں کی امیدواروں کی فہرست سے متناسب نمائندگی کے نظام کے ذریعے قومی اسمبلی میں ہر ایک سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد کی بنیاد پر منتخب کئے جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ اس ذیلی شق کی غرض کے لئے کسی سیاسی جماعت کی طرف سے حاصل کردہ عام نشستوں کی کل تعداد میں وہ کامیاب آزاد امیدوار شامل ہوں گے جو سرکاری جریدے میں کامیاب امیدواروں کے ناموں کی اشاعت سے تین یوم کے اندر باضابطہ طور پر مذکورہ سیاسی جماعت میں شامل ہو جائیں۔ (آرٹیکل 51)

Legislature

English

(1) The Senate shall consist of one-hundred and four members, of whom,
(a) fourteen shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(b) eight shall be elected from the Federally Administered Tribal Areas, in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(c) two on general seats, and one woman and one technocrat including aalim shall be elected from the Federal Capital in such manner as the President may, by Order, prescribe;
(d) four women shall be elected by the members of each Provincial Assembly;
(e) four technocrats including ulema shall be elected by the members of each Provincial Assembly; and
(f) four non-Muslims, one from each Province, shall be elected by the members of each Provincial Assembly:
Provided that paragraph (f) shall be effective from the next Senate election after the commencement of the Constitution (Eighteenth Amendment) Act, 2010.
(2) Election to fill seats in the Senate allocated to each Province shall be held in accordance with the system of proportional representation by means of the single transferable vote.
(3) The Senate shall not be subject to dissolution but the term of its members, who shall retire as follows, shall be six years :­
(a) of the members referred to in paragraph (a) of clause (1), seven shall retire after the expiration of the first three years and seven shall retire after the expiration of the next three years;
(b) of the members referred to in paragraph (b) of the aforesaid clause, four shall retire after the expiration of the first three years and four shall retire after the expiration of the next three years;
(c) of the members referred to in paragraph (c) of the aforesaid clause,­—
(i) one elected on general seat shall retire after the expiration of the first three years and the other one shall retire after the expiration of the next three years; and
(ii) one elected on the seat reserved for technocrat shall retire after first three years and the one elected on the seat reserved for women shall retire after the expiration of the next three years;
(d) of the members referred to in paragraph (d) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the first three years and two shall retire after the expiration of the next three years;
(e) of the members referred to in paragraph (e) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of the first three years and two shall retire after the expiration of the next three years; and
(f) of the members referred to in paragraph (f) of the aforesaid clause, two shall retire after the expiration of first three years and two shall retire after the expiration of next three years:
Provided that the Election Commission for the first term of seats for non-Muslims shall draw a lot as to which two members shall retire after the first three years.
… (Art. 59)

Urdu

(1) سینٹ ایک سو ارکان پر مشتمل ہو گی جن میں سے -
(الف) چودہ ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ب) آٹھ وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقوں سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(ج) دو عام نشستوں پر اور ایک خاتون اور ایک ٹیکنوکریٹ بشمول عالم وفاقی دارالحکومت سے ایسے طریقے سے منتخب کئے جائیں گے جو صدر، فرمان کے ذریعے مقرر کرے؛
(د) چار خواتین ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے؛
(ہ) چار ٹیکنوکریٹ بشمول علماء ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے۔
(و) چار غیر مسلم، ہر صوبے سے ایک، ہر ایک صوبائی اسمبلی کے ارکان منتخب کریں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ پیراگراف (و) دستور (اٹھارویں ترمیم) ایکٹ 2010 کے نفاذ کے بعد سینٹ کے اگلے الیکشن سے مؤثر ہو گا۔
(2) سینٹ میں ہر صوبے کے لئے متعین نشستوں کو پُر کرنے کے لئے انتخاب، واحد قابل انتقال ووٹ کے ذریعے متناسب نمائندگی کے نظام کے مطابق کیا جائے گا۔
(3) سینٹ ٹوٹنے کے تابع نہیں ہو گی لیکن اس کے ارکان کی معیاد، جو بحسب ذیل سبکدوش ہوں گے، چھ سال ہو گی:- (الف) شق (1) کے پیرا (الف) کے محولہ ارکان میں سے، سات پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ (ب) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ب) میں محولہ ارکان میں سے چار پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور چار اگلے تیس سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛
(ج) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ج) میں محولہ ارکان میں سے، -
(اول) عام نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور دوسرا اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛
(دوم) ٹیکنوکریٹ کی نشست پر منتخب ہونے والا ایک پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا اور خواتین کے لئے مخصوص نشست پر منتخب ہونے والا ایک اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائے گا؛ (د) مذکورہ بالا شق کے پیرا (د) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے؛ اور
(ہ) مذکورہ بالا شق کے پیرا (ہ) میں محولہ ارکان میں سے، دو پہلے تین سال کے اختتام کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی پہلی مدت کی نشستوں کے لئے قرعہ ڈالا جائے گا کہ کون سے دو ارکان پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائیں گے۔
(و) مذکورہ بالا شق کے پیرا (و) میں محولہ ارکان میں سے دو پہلے تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے اور دو اگلے سال تین سال کے اختتام پر سبکدوش ہو جائیں گے:
مگر شرط یہ ہے کہ الیکشن کمیشن غیر مسلموں کی نشستوں کی پہلی میعاد کے لیے قرعہ اندازی کرے گا کہ کون سا رکن پہلے تین سال کے بعد سبکدوش ہو جائے گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 59)

Legislature

English

(1) A person shall not be qualified to be elected or chosen as a member of Majlis-e-Shoora (Parliament) unless­—
(a) he is a citizen of Pakistan;
(b) he is, in the case of the National Assembly, not less than twenty- five years of age and is enrolled as a voter in any -electoral roll in­—
(i) any part of Pakistan, for election to a general seat or a seat reserved for a non-Muslims; and
(ii) any area in a Province from which she seeks membership for election to a seat reserved for women.
(c) he is, in the case of the Senate, not less than thirty years of age and is enrolled as a voter in any area in a Province or, as the case may be, the Federal Capital or the Federally Administered Tribal Areas, from where he seeks membership;
(d) he is of good character and is not commonly known as one who violates Islamic Injunctions;
(e) he has adequate knowledge of Islamic teachings and practices obligatory duties prescribed by Islam as well as well abstains from major sins;
(f) he is sagacious, righteous, non-profligate, honest and ameen, there being no declaration to the contrary by a court of law; and
(g) he has not, after the establishment of Pakistan, worked against the integrity of the country or opposed the ideology of Pakistan:
(2) The disqualifications specified in paragraphs (d) and (e) shall not apply to a person who is a non-Muslim, but such a person shall have good moral reputation. (Art. 62)

Urdu

(1) کوئی شخص مجلس شوریٰ (پارلیمینٹ) کارکن منتخب ہونے یا چنے جانے کا اہل نہیں ہو گا اگر۔
(الف) وہ پاکستان کا شہری نہ ہو؛
(ب) وہ قومی اسمبلی کی صورت میں پچیس سال سے کم عمر کا ہو اور کسی انتخابی فہرست میں ووٹر کی حیثیت سے -
(اول) پاکستان کے کسی حصہ میں، کسی عام نشست یا غیر مسلموں کے لئے مخصوص کسی نشست پرانتخاب کے لۓ درج نہ ہو؛ اور
(دوم) کسی صوبہ میں ایسے علاقے میں جہاں سے وہ خواتین کے لئے مخصوص نشست پر انتخاب کے لئے رکنیت چاہتا ہو، درج نہ ہو،
(ج) وہ سینٹ کی صورت میں، تیس سال سے کم عمر کا ہو اور کسی صوبے میں کسی علاقے میں یا، جیسی بھی صورت ہو، وفاقی درالحکومت یا وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقہ جات میں جہاں سے وہ رکنیت چاہتا ہو بطورووٹردرج نہ ہو؛
(د) وہ اچھے کردار کا حامل نہ ہو اورعام طور پراحکام اسلام سے انحراف میں مشہور ہو؛ (ہ) وہ اسلامی تعلیمات کا خاطرخواہ علم نہ رکھتا ہو اور اسلام کے مقررکردہ فرائض کا پابند نیز کبیرہ گناہوں سے مجتنب نہ ہو؛
(و) وہ سمجھدار، پارسا نہ ہو اور فاسق ہو اور ایماندار اور امین نہ ہو؛
(ز) کسی اخلاقی پستی میں ملوث ہونے یا جھوٹی گواہی دینے کے جرم میں سزایافتہ ہو؛
(ح) اس نے قیام پاکستان کے بعد ملک کی سالمیت کے خلاف کام کیا ہو یا نظریہ پا کستان کی مخالفت کی ہو:
(2) پیرا(د) اور(ہ) میں مصرحہ نااہلیتوں کا کسی ایسے شخص پر اطلاق نہیں ہو گا جو غیرمسلم ہو، لیکن ایسا شخص اچھی شہرت کا حامل ہو گا۔ (آرٹیکل 62)

Property, Inheritance and Land Tenure

English

Every citizen shall have the right to acquire, hold and dispose of property9 in any part of Pakistan, subject to the Constitution and any reasonable restrictions imposed by law in the public interest. (Art. 23)

Urdu

دستور اور مفادِ عامہ کے پیشِ نظر قانون کے ذریعے عائد کردہ معقول پابندیوں کے تابع، ہر شہری کو جائیداد حاصل کرنے، قبضہ میں رکھنے اور فروخت کرنے کا حق ہوگا۔ (آرٹیکل 23)

Property, Inheritance and Land Tenure

English

(1) Majlis-e-Shoora (Parliament) may by law,-
(a) prescribe the maximum limits as to property or any class thereof which may be owned, held, possessed or controlled by any person; …
(2) Any law which permits a person to own beneficially or possess beneficially an area of land greater than that which, immediately before the commencing day, he could have lawfully owned beneficially or possessed beneficially shall be invalid. (Art. 253)

Urdu

(1) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) بذریعہ قانون -
(الف) ایسی جائیداد یا اس کی کسی قسم کے بارے میں جو کوئی شخص ملکیت، تصرف، قبضہ یا نگرانی میں رکھ سکے گا انتہائی تحیدات مقرر کر سکے گی؛ اور ۔ ۔ ۔
(2) کوئی قانون جو کسی شخص کو اس رقبہ اراضی سے زیادہ اراضی کی منفعتی ملکیت یا منفعتی قبضہ کی اجازت دے جو وہ یوم آغاز سے عین قبل جائز طور پر منفعتی ملکیت میں رکھ سکتا تھا یا منفعتی قبضہ میں لا سکتا تھا، کالعدم ہو گا۔ (آرٹیکل 253)

Protection from Violence

English

The State shall ensure the elimination of all forms of exploitation and the gradual fulfilment of the fundamental principle, from each according to his ability, to each according to his work. (Art. 3)

Urdu

مملکت استحصال کی تمام اقسام کے خاتمہ اور اس بنیادی اصول کی تدریجی تکمیل کو یقینی بنائے گی کہ ہر کسی سے اس کی اہلیت کے مطابق کام لیا جائے گا اور ہر کسی کو اس کے کام کے مطابق معاوضہ دیا جائے۔ (آرٹیکل 3)

Protection from Violence

English

To enjoy the protection of law and to be treated in accordance with law is the inalienable right of every citizen, wherever he may be and of every other person for the time being within Pakistan.
(2) In particular-
(a) no action detrimental to the life, liberty, body, reputation or property of any person shall be taken except in accordance with law;
… (Art. 4)

Urdu

ہر شہری کا (خواہ کہیں بھی ہو) اور کسی دوسرے شخص کا جو فی الوقت پاکستان میں ہو، یہ ناقابلِ انتقال حق ہے کہ اسے قانون کا تحفظ حاصل ہو اور اس کے ساتھ قانون کے مطابق سلوک کیا جائے
 (2) خصوصا –
(الف) کوئی ایسی کاروائی نہ کی جائے جو کسی شخص کی جان، آزادی، جسم، شہرت یا املاک کے لیے مضر ہو، سوائے جب کہ قانون اس کی اجازت دے؛
... (آرٹیکل 4)

Protection from Violence

English

(1) Slavery is non-existent and forbidden and no law shall permit or facilitate its introduction into Pakistan in any form.
(2) All forms of forced labour and traffic in human beings are prohibited.
… (Art. 11)

Urdu

(1) غلامی معدوم اور ممنوع ہے اور کوئی قانون کسی بھی صورت میں اسے پاکستان میں رواج دینے کی اجازت نہیں دے گا یا سہولت بہم پہنچائے گا۔
(2) بیگار کی تمام صورتوں اور انسانوں کی خرید و فروخت کو ممنوع قرار دیا جاتا ہے۔
... (آرٹیکل 11)

Protection from Violence

English

(2) No person shall be subjected to torture for the purpose of extracting evidence. (Art 14)

Urdu

(2) کسی شخص کو شہادت حاصل کرنے کی غرض سے اذیت نہیں دی جائے گی۔ (آرٹیکل 14)

Public Institutions and Services

English

The state shall protect the marriage, the family, the mother and the child. (Art. 35)

Urdu

مملکت، شادی، خاندان ماں اور بچے کی حفاظت کرے گی۔ (آرٹیکل 35)

Public Institutions and Services

English

The State shall-
(a) secure the well-being of the people, irrespective of sex, caste, creed or race, by raising their standard of living, by preventing the concentration of wealth and means of production and distribution in the hands of a few to the detriment of general interest and by ensuring equitable adjustment of rights between employers and employees, and landlords and tenants;
(b) provide for all citizens, within the available resources of the country, facilities for work and adequate livelihood with reasonable rest and leisure;
(c) provide for all persons employed in the service of Pakistan or otherwise, social security by compulsory social insurance or other means;
(d) provide basic necessities of life, such as food, clothing, housing, education and medical relief, for all such citizens, irrespective of sex, caste, creed or race, as are permanently or temporarily unable to earn their livelihood on account of infirmity, sickness or unemployment;
(e) reduce disparity in the income and earnings of individuals, including persons in the various classes of the service of Pakistan;
… (Art. 38)

Urdu

مملکت -
(الف) عام آدمی کے معیارِ زندگی کو بلند کرکے، دولت اور وسائل پیدوار و تقسیم کو چند اشخاص کے ہاتھوں میں اس طرح جمع ہونے سے روک کر کہ اس سے مفادِ عامہ کو نقصان پہنچے اور آجر و ماجور اور زمیندار اور مزارع کے درمیان حقوق کی منصفانہ تقسیم کی ضمانت دے کر بلا لحاظ جنس، ذات، مذہب یا نسل، عوام کی فلاح و بہبود کے حصول کی کوشش کرے گی؛
(ب) تمام شہریوں کے لیے، ملک میں دستیاب وسائل کے اندر، معقول آرام و فرصت کے ساتھ کام اور مناسب روزی کی سہولتیں مہیا کرے گی؛
(ج) پاکستان کی ملازمت میں، یا بصورت دیگر ملازم تمام اشخاص کو لازمی معاشری بیمہ کے ذریعے یا کسی اور طرح معاشرتی تحفظ مہیا کرے گی؛
(د) ان تمام شہریوں کے لیے جو کمزوری، بیماری یا بیروزگاری کے باعث مستقل یا عارضی طور پر اپنی روزی نہ کما سکتے ہوں بلا لحاظ جنس، ذات، مذہب یا نسل، بنیادی ضروریات زندگی مثلا خوراک، لباس، رہائش، تعلیم اور طبی امداد مہیا کرے گی؛
(ہ) پاکستان کی ملازمت کے مختلف درجات میں اشخاص سمیت، افراد کی آمدنی اور کمائی میںعدم مساوات کو کم کرے گی؛
... (آرٹیکل 38)

Status of the Constitution

English

(2) Obedience to the Constitution and law is the inviolable obligation of every citizen wherever he may be and of every other person for the time being within Pakistan. (Art. 5)

Urdu

(2) دستور اور قانون کی اطاعت ہر شہری خواہ وہ کہیں بھی ہو اور ہر اس شخص کی جو فی الوقت پاکستان میں ہو واجب التعمیل ذمہ داری ہے (آرٹیکل 5)

Status of the Constitution

English

(1) Any law, or any custom or usage having the force of law, in so far as it is inconsistent with the rights conferred by this Chapter10 shall, to the extent of such inconsistency, be void.
(2) The State shall not make any law which takes away or abridges the rights so conferred and any law made in contravention of this clause shall, to the extent of such contravention, be void.
… (Art. 8)

Urdu

(1) کوئی قانون، یا رسم یا رواج جو قانون کا حکم رکھتا ہو، تناقض کی اس حد تک کالعدم ہو گا جس حد تک وہ اس باب میں عطاکردہ حقوق کا نقیض ہو۔
(2) مملکت کوئی ایسا قانون وضع نہیں کرے گی جو بایں طور عطاکردہ حقوق کو سلب یا کم کرے اور ہر وہ قانون جو اس شق کی خلاف ورزی میں وضع کیا جائے اس خلاف ورزی کی حد تک کالعدم ہو گا۔
۔ ۔ ۔ (آرٹیکل 8)

Status of the Constitution

English

The provisions of this Chapter11 shall have effect notwithstanding anything contained in the Constitution. (Art. 203A)

Urdu

دستور میں شامل کسی امر کے باوجود اس باب کے احکام مؤثر ہوں گے۔ (آرٹیکل 203 الف)

Religious Law

English

Whereas sovereignty over the entire Universe belongs to Almighty Allah alone, and the authority to be exercised by the people of Pakistan within the limits prescribed by Him is a sacred trust; …
Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice, as enunciated by Islam, shall be fully observed;
Wherein the Muslims12 shall be enabled to order their lives in the individual and collective spheres in accordance with the teachings and requirements of Islam as set out in the Holy Quran and Sunnah;
… (Preamble)

Urdu

چونکہ اللہ تبارک و تعالی ہی پوری کائنات کا بلا شرکتِ غیرے حاکم مطلق ہے اور پاکستان کے جمہور کو جو اختیار و اقتدار اللہ کی مقرر کردہ حدود کے اندر استعمال کرنے کا حق ہوگا، وہ ایک مقدس امانت ہے؛ ۔ ۔ ۔
جس میں جمہوریت، آزادی، مساوات، رواداری اور عدل عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے، پوری طرح عمل کیا جائے گا؛
جس میں مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی حلقہ ہائے عمل میں اس قابل بنایا جائے گا کہ وہ اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات و مقتضیات کے مطابق، جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، ترتیب دے سکیں؛
... (تمہید)

Religious Law

English

Islam shall be the State religion of Pakistan. (Art. 2)

Urdu

اسلام پاکستان کا مملکتی مذہب ہوگا۔ (آرٹیکل 2)

Religious Law

English

(1) Steps shall be taken to enable the Muslims of Pakistan, individually and collectively, to order their lives in accordance with the fundamental principles and basic concepts of Islam and to provide facilities whereby they may be enabled to understand the meaning of life according to the Holy Quran and Sunnah.
(2) The State shall endeavour, as respects the Muslims of Pakistan,-
(a) to make the teaching of the Holy Quran and Islamiat compulsory, to encourage and facilitate the learning of Arabic language and to secure correct and exact printing and publishing of the Holy Quran;
(b) to promote unity and the observance of the Islamic moral standards; and
(c) to secure the proper organisation of Zakat, ushr, auqaf and mosques. (Art. 31)

Urdu

(1) پاکستان کے مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی طور پر اپنی زندگی اسلام کے بنیادی اصولوں اور اساسی تصورات کے مطابق مرتب کرنے کے قابل بنانے کے لیے اور انہیں ایسی سہولتیں مہیا کرنے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے جن کی مدد سے وہ قرآن پاک اور سنت کے مطابق زندگی کا مفہوم سمجھ سکیں۔
(2) پاکستان کے مسلمانوں کے بارے میں مملکت مندرجہ ذیل کے لیے کوشش کرے گی:-
(الف) قرآن پاک اور اسلامیات کی تعلیم کو لازمی قرار دینا ، عربی زبان سیکھنے کی حوصلہ افزائی کرنا اور اس کے لیے سہولت بہم پہنچانا اور قرآن پاک کی صحیح اور من و عن طباعت اور اشاعت کا اہتمام کرنا؛
(ب) اتحاد اور اسلامی اخلاقی معیاروں کی پابندی کو فروغ دینا؛ اور
(ج) زکوۃ ، عشر ، اوقاف اور مساجد کی باقاعدہ تنظیم کا اہتمام کرنا۔ (آرٹیکل 31)

Religious Law

English

The provisions of this Chapter13 shall have effect notwithstanding anything contained in the Constitution. (Art. 203A)

Urdu

دستور میں شامل کسی امر کے باوجود اس باب کے احکام مؤثر ہوں گے۔ (آرٹیکل 203 الف)

Religious Law

English

In this Chapter14 unless there is anything repugnant in the subject or context,-

(c) "law" includes any custom or usage having the force of law but does not include the Constitution, Muslim personal law, any law relating to the procedure of any court or tribunal or, until the expiration of ten years from the commencement of this Chapter, any fiscal law or any law relating to the levy and collection of taxes and fees or banking or insurance practice and procedure;
… (Art. 203B)

Urdu

اس باب14 میں، تاوقتیکہ کوئی امر موضوع یا سیاق و سباق کے منافی نہ ہو، -
...
(ج) "قانون" میں کوئی رسم یا رواج شامل ہے جو قانون کا اثر رکھتا ہو مگر اس میں دستور، مسلم شخصی قانون، کسی عدالت یا ٹریبونل کے ضابطہ کار سے متعلق کوئی قانون یا، اس بات کے آغاذ نفاذ سے دس سال کی مدت گزرنے تک، کوئی مالی قانون یا محصولات یا فیسوں کے عائد کرنے اور جمع کرنے یا بنکاری یا بیمہ کے عمل اور طریقہ سے متعلق کوئی قانون شامل نہیں ہے؛
... (آرٹیکل 203ب)

Religious Law

English

(1) The Court may, either of its own motion or on the petition of a citizen of Pakistan or the Federal Government or a Provincial Government, examine and decide the question whether or not any law or provision of law is repugnant to the Injunctions of Islam, as laid down in the Holy Quran and Sunnah of the Holy Prophet, hereinafter referred to as the Injunctions of Islam.
… (Art. 203D)15

Urdu

(1) عدالت، (یا تو خود اپنی تحریک پر یا) پاکستان کے کسی شہری یا وفاقی حکومت یا کسی صوبائی حکومت کی درخواست پر اس سوال کا جائزہ لے سکے گی اور فیصلہ کر سکے گی کہ آیا کوئی قانون یا قانون کا کوئی حکم ان اسلامی احکام ے منافی ہے یا نہیں جس طرح کہ قرآن پاک اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے جن کا حوالہ بعد ازیں اسلامی احکام کے طور پر دیا گیا ہے۔
... (آرٹیکل 203 د)

Religious Law

English

(1) All existing laws shall be brought in conformity with the Injunctions of Islam as laid down in the Holy Quran and Sunnah, in this Part referred to as the Injunctions of Islam, and no law shall be enacted which is repugnant to such injunctions.
Explanation.-In the application of this clause to the personal law of any Muslim sect, the expression “Quran and Sunnah” shall mean the Quran and Sunnah as interpreted by that sect.
(2) Effect shall be given to the provisions of clause (1) only in the manner provided in this Part.
(3) Nothing in this Part shall affect the personal laws of non-Muslim citizens or their status as citizens. (Art. 227)

Urdu

(1) تمام موجودہ قوانین کو قرآن پاک اور سنت میں منضبط اسلامی احکام کے مطابق بنایا جائے گا، جن کا اس حصہ میں بطور اسلامی احکام حوالہ دیا گيا ہے، اور ایسا کوئی قانون وضع نہیں کیا جائے گا جومذکورہ احکام کے منافی ہو۔ [تشریح:- کسی مسلم فرقے کے قانونی شخصی پر اس شق کا اطلاق کرتے ہوئے، عبارت "قرآن و سنت" سے مذکورہ فرقے کی کی ہوئی توضیح کے مطابق قرآن اور سنت مراد ہوگی۔]
(2) شق (1) کے احکام کو صرف اس طریقہ کے مطابق نافذ کیا جائے گا جو اس حصہ میں منضبط ہے۔
(3) اس حصہ میں کسی امر کا غیر مسلم شہریوں کے قوانین شخصی یا شہریوں کے بطور ان کی حیثیت پر اثر نہیں پڑے گا- (آرٹیکل 227)

Religious Law

English

(1) There shall be, constituted with a period of ninety days from the commencing day a Council of Islamic ideology, in this part referred to as the Islamic Council.
(2) The Islamic Council shall consist of such members, being not less than eight and not more than twenty as the President may appoint from amongst persons having knowledge of the principles and philosophy of Islam as enunciated in the Holy Quran and Sunnah, or understanding of the economic, political, legal or administrative problems of Pakistan.
(3) While appointing members of the Islamic Council the President shall ensure that –
(a) so far as practicable various schools of thought are represented in the Council;
(b) not less than two of the members are persons each of whom is, or has been a Judge of the Supreme Court or of a High Court;
(c) not less than one-third of the members are persons each of whom has been engaged, for a period of not less than fifteen years, in Islamic research or instruction; and
(d) at least one member is a woman.
… (Art. 228)

Urdu

(1) یوم آغاز سے نوے دن کی مدت کے اندر اسلامی نظریات کی ایک کونسل تشکیل کی جائے گی جس کا اس حصے میں بطور اسلامی کونسل حوالہ دیا گیا ہے۔
(2) اسلامی کونسل کم ازکم آٹھ اور زیادہ سے زیادہ [بیس] ایسے ارکان پر مشتمل ہو گی جس طرح کہ صدر ان اشخاص میں سے مقرر کرے، جنہیں اسلام کے اصولوں اور فلسفے کا جس طرح کہ قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گيا ہے علم ہو یا پاکستان کے اقتصادی، سیاسی، قانونی اور انتظامی مسائل کا فہم و ادراک ہو۔
(3) اسلامی کونسل کے ارکان مقرر کرتے وقت ان امور کا تعین کرے گا کہ -
(الف) جہاں تک قابل عمل ہو کونسل میں مختلف مکاتب فکر کو نمائندگی حاصل ہو؛ (ب) کم ازکم دو ارکان ایسے اشخاص ہوں جن میں سے ہر ایک عدالت عظمٰی یا کسی عدالیت عالیہ کا جج ہو یا رہا ہو؛ (ج) کم ازکم چار ارکان ایسے ہوں جن میں سے ہر ایک کم سے کم پندرہ سال کی مدت سے اسلامی تحقیق یا تدریس سے وابستہ چلا آ رہا ہو؛ اور
(د) کم از کم ایک رکن خاتون ہو۔
... (آرٹیکل 228)

Religious Law

English

(1) The functions of the Islamic Council shall be-
(a) to make recommendations to Majlis-e-Shoora (Parliament) and the Provincial Assemblies as the ways and means of enabling and encouraging the Muslims of Pakistan to order their lives individually and collectively in all respects in accordance with the principles and concepts of Islam as enunciated in the Holy Quran and Sunnah;
(b) to advise a House, a Provincial Assembly, the President or a Governor on any question referred to the Council as to whether a proposed law is or is not repugnant to the Injunctions of Islam.
(c) to make recommendations as to the measures for bringing existing laws into conformity with the Injunctions of Islam and the stages by which such measures should be brought into effect; and
(d) to compile in a suitable form, for the guidance of Majlis-e-Shoora (Parliament) and the Provincial Assemblies, such injunctions of Islam as can be given legislative effect.
… (Art. 230)

Urdu

(1) اسلامی کونسل کے کارہائے منصبی حسب ذیل ہوں گے -
(الف) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) اور صوبائی اسمبلیوں سے ایسے ذرائے اور وسائل کی سفارش کرنا جن سے پاکستان کے مسلمانوں کو اپنی زندگیاں انفرادی اور اجتماعی طور پر ہر لحاظ سے اسلام کے ان اصولوں اور تصورات کے مطابق ڈھالنے کی ترغیب اور امداد ملے جن کا قرآن پاک اور سنت میں تعین کیا گیا ہے؛
(ب) کسی ایوان، کسی صوبائی اسمبلی، صدر یا کسی گورنر کو کسی ایسے سوال کے بارے میں مشورہ دینا جس میں کونسل سے اس بابت رجوع کیا گیا ہو کہ آیا کوئی مجوزہ قانون اسلامی احکام کے منافی ہے یا نہیں؛
(ج) ایسی تدابیر کی جن سے نافذالعمل قوانین کو اسلامی احکام کے مطابق بنایا جائے گا نیز ان مراحل کی جن سے گزر کر محولہ تدابیر کا نفاذ عمل میں لانا چاہئے، سفارش کرنا؛ اور
(د) مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) اور صوبائی اسمبلیوں کی رہنمائی کے لئے اسلام کے ایسے احکام کی ایک موزوں شکل میں تدوین کرنا جنہیں قانونی طور پر نافذ کیا جا سکے۔;
… (آرٹیکل 230)

Religious Law

English

… Wherein the principles of democracy, freedom, equality, tolerance and social justice as enunciated by Islam shall be fully observed;
Wherein the Muslims shall be enabled to order their lives in the individual and collective spheres in accordance with the teachings and requirements of Islam as set-out in the Holy Quran and the Sunnah; … (Objectives Resolution)

Urdu

... جس میں جمہوریت، آزادی، مساوات، رواداری اور عدل عمرانی کے اصولوں پر جس طرح اسلام نے ان کی تشریح کی ہے، پوری طرح عمل کیا جائے گا؛
جس میں مسلمانوں کو انفرادی اور اجتماعی حلقہ ہائے عمل میں اس قابل بنایا جائے گا کہ وہ اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات و مقتضیات کے مطابق، جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، ترتیب دے سکیں؛ ... (قرارداد مقاصد)

Customary Law

English

(1) Any law, or any custom or usage having the force of law, in so far as it is inconsistent with the rights conferred by this Chapter,16shall, to the extent of such inconsistency, be void.
… (Art. 8)

Urdu

(1) کوئی قانون، یا رسم یا رواج جو قانون کا حکم رکھتا ہو، تناقض کی اس حد تک کالعدم ہو گا جس حد تک وہ اس باب میں عطاکردہ حقوق کا نقیض ہو۔
... (آرٹیکل 8)

Customary Law

English

In this Chapter17 unless there is anything repugnant in the subject or context,- …
(c) "law" includes any custom or usage having the force of law but does not include the Constitution, Muslim personal law, any law relating to the procedure of any court or tribunal or, until the expiration of ten years from the commencement of this Chapter, any fiscal law or any law relating to the levy and collection of taxes and fees or banking or insurance practice and procedure;
… (Art. 203B)

Urdu

اس باب میں، تاوقتیکہ کوئی امر موضوع یا سیاق و سباق کے منافی نہ ہو، -
...
(ج) "قانون" میں کوئی رسم یا رواج شامل ہے جو قانون کا اثر رکھتا ہو مگر اس میں دستور، مسلم شخصی قانون، کسی عدالت یا ٹریبونل کے ضابطہ کار سے متعلق کوئی قانون یا، اس بات کے آغاذ نفاذ سے دس سال کی مدت گزرنے تک، کوئی مالی قانون یا محصولات یا فیسوں کے عائد کرنے اور جمع کرنے یا بنکاری یا بیمہ کے عمل اور طریقہ سے متعلق کوئی قانون شامل نہیں ہے؛
... (آرٹیکل 203ب)

1

Constitution of the Islamic Republic of Pakistan 1973, as amended to 2015 (English). According to Article 251: (1) "The National language of Pakistan is Urdu …”

2

Constitution of the Islamic Republic of Pakistan 1973, as amended to 2015 (Urdu). The Urdu version of the amendments are only available up to 2010. The Constitution Eighteenth Amendment Act of 2010 is available in HeinOnline World Constitutions Illustrated Library (2016).
Links to all sites last visited 2 March 2016

3,4

3 - Part II, Chapter 1 on Fundamental Rights.
4 - According to Art. 7: “In this Part [Part II on Fundamental Rights and Principles of Policy], unless the context otherwise requires, “the State” means the Federal Government, Majlis-e-Shoora (Parliament), a Provincial Government, a Provincial Assembly, and such local or other authorities in Pakistan as are by law empowered to impose any tax or cess.”

5

Part II Chapter 1 on Fundamental Rights.

6

Refer to Art. 51 (3) for the Table of Distribution by Province, Federally Administered Tribal Areas and the Federal Capital. According to Art. 260: (3) “In the Constitution and all enactments and other legal instruments, unless there is anything repugnant in the subject or context,—
… (b) “non-Muslim” means a person who is not a Muslim and includes a person belonging to the Christian, Hindu, Sikh, Buddhist or Parsi community, a person of the Quadiani Group or the Lahori Group (who call themselves ‘Ahmadis’ or by any other name), or a Bahai, and a person belonging to any of the scheduled castes.”

7

Refer to remaining part of Art. 106 (1) for the Table of Distribution by General Seats, Women and Non-Muslims.

8

Refer to Art. 51 (3) for the Table of Distribution by Province, Federally Administered Tribal Areas and the Federal Capital.

9

According to Art. 260: “… “Property” includes any right, title or interest in property, movable or immovable, and any means and instruments of production; …”

10

Part II, Chapter 1 on Fundamental Rights.

11

Part VII, Chapter 3A on Federal Shariat Court.

12

According to Art. 260: (3) “In the Constitution and all enactments and other legal instruments, unless there is anything repugnant in the subject or context,— (a) “Muslim” means a person who believes in the unity and oneness of Almighty Allah, in the absolute and unqualified finality of the Prophethood of Muhammad (peace be upon him), the last of the Prophets and does not believe in, or recognize as a prophet or religious reformer, any person who claimed or claims to be a prophet, in any sense of the word or of any description whatsoever, after Muhammad (peace be upon him); … ”

13

Part VII, Chapter 3A on Federal Shariat Court.

14

Part VII, Chapter 3A on Federal Shariat Court.

15

Part VII, Chapter 3A on Federal Shariat Court.

16

Part II, Chapter 1 on Fundamental Rights. 

17

Part VII, Chapter 3A on Federal Shariat Court.